2024 May 22
شیخ مفید کے اجتہادی فکر میں صدیقہ طاہرہ سلام الله علیها کی شہادت کے دلائل کا تجزیہ
مندرجات: ٢٢٩١ تاریخ اشاعت: ٠٧ August ٢٠٢٣ - ١٥:٤٨ مشاہدات: 883
مضامین و مقالات » پبلک
جدید
شیخ مفید کے اجتہادی فکر میں صدیقہ طاہرہ سلام الله علیها کی شہادت کے دلائل کا تجزیہ

 

1. خلاصہ:

شیخ مفید بزرگ شیعہ فقیہ اور علماء میں سے ہیں، جن کے نظریات امامیہ کے بہت سے نظریاتی اور تاریخی مسائل میں مرکزی حیثیت رکھتے ہیں۔

  حالیہ برسوں میں، شیعہ ثقافت، خاص طور پر ایام فاطمیہ کے ترویج کی وجہ سے، بعض منحرف دہشت گرد گروہوں نے یہ جھوٹا دعویٰ کیا ہے کہ شیخ مفید صدیقہ طاہرہ کی شہادت پر اعتقاد نہیں رکھتے، خدا ان پر رحم فرمائے۔ جبکہ شیخ مفید کی اجتہادی فکر کا ان کے تاریخی، فقہی اور اصولی کاموں سے تجزیہ کرنے سے معلوم ہوتا ہے کہ امامیہ کے اس عظیم عالم کی فکر میں حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت ایک قطعی اور یقینی ہے۔  اس مضمون میں ہم متعدد منابع مثلاً روایات کی تعدد، شواہد، شہرت، صحیح احادیث کی کتابوں میں ان کی شہادت اور مصائب کی بنیاد پر تجزیہ و شواہد کے ساتھ یہ دکھانے کی کوشش کر رہے ہیں کہ مسئلہ شہادت اور مصائب حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا یقینی ہے۔

 .2 بیان  مسئلہ

 محمد بن محمد بن نعمان شیخ مفید 336ھ میں بغداد میں پیدا ہوئے۔ وہ شیعوں کے بزرگ فقہاء، محدثین اور علمائے دین میں سے ہیں۔ شیخ مفید کے مشہور اور معتبر شاگرد نجاشی (رحمہ اللہ) ان کے بارے میں فرماتے ہیں:

«1067 محمد بن محمد بن النعمان‏ ... شیخنا و أستاذنا رضی الله عنه. فضله أشهر من أن یوصف فی الفقه و الکلام و الروایة و الثقة و العلم»‏

"محمد بن محمد بن نعمان بن عبدالسلام بن جابر بن نعمان بن سعید بن جبیر ہمارے شیخ اور استاد ہیں - خدا ان سے راضی ہوں - فقہ و حدیث میں ان کا فضل اور ان کی ثقہ ہونا مشہور ہے۔ ان کے متعددکتابیں ہیں۔"

نجاشى، احمد بن على، رجال النجاشی، ص399، 1جلد، جماعة المدرسین فی الحوزة العلمیة بقم، مؤسسة النشر الإسلامی - ایران - قم، چاپ: 6، 1365 ه.ش.

امامیہ کی اس عظیم شخصیت کے بارے میں جو ابہام پیدا ہوئے ہیں ان میں سے ایک حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت کے سلسلے میں ان کا نظریہ ہے۔ کچھ منحرف گروہ  مثلاً  انگریزی دہشت گردانہ تحریک یہ بہانہ کرنے کی کوشش کرتی ہے کہ امامیہ کے اس عظیم عالم کو  حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت پر اعتقادنہیں ہے۔ بلاشبہ اس شبہ کے جواب کے لیے شیخ مفید کے اجتہاد کی بنیادوں کا ان کی تصانیف اور کتابوں سے تفصیلی تجزیہ درکار ہے۔ اس لیے ہمیں احادیث کی سند اور قبولیت میں شیخ مفید کے اجتہاد کی بنیادوں کے تجزیے کی طرف رجوع کرنا چاہیے۔

 

3. روایات کی سند اور قبولیت میں شیخ مفید کی بنیاد کا تجزیہ

ہر فقیہ اور متکلم کے لیے اجتہاد کی سب سے اہم بنیادوں میں سے ایک یہ ہے کہ اس کی نظر میں شرعی دلائل - عقلی اور نقلی دونوں طرح کی تصدیق کے طریقوں سے واقف ہو۔ شرعی شواہد میں قرآن کے ساتھ ساتھ احادیث بھی تنوع اور اہمیت کے اعتبار سے اجتہاد کا سب سے اہم ستون ہیں۔

مثال کے طور پر، اگر کوئی فقیہ اور عالم دین کسی کتاب کی تمام احادیث کو - جیسا کہ صحیح بخاری یا اصول کافی - کو حجت اور دلیل شرعی کے طور پر مانتا ہے، تو اس کا مطلب یہ ہے کہ وہ ان احادیث کے مندرجات پر یقین رکھتا ہے اور ان پر عمل کرتا ہے، اور فتویٰ دیتاہے۔

 

ایک اور مثال یہ ہے کہ اگر ایک فقیہ اور عالم تمام احادیث کے صحیح ہونے کو قطعی طور پر تسلیم کر لے، اس کے مقابلے میں کسی دوسرے فقیہ کے مقابلے میں جو مفید روایات اور علم کو قبول کرتا ہے، تو احکام سے اجتہاد اور استنباط کرنےمیں مختلف نتائج برآمد ہوں ۔

 

یہاں ضروری ہے کہ شیخ مفید کی روایت کو قبول کرنے کی بنیاد کی طرف اشارہ کیا جائے اور ان کے دلائل اور فتاویٰ کی توثیق میں اس کے نتائج پر مزید بحث کی جائے، خاص طور پر حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت کے مسئلہ میں۔

 

شیخ مفید اپنی کتاب اصول فقہ بنام "التذکرہ با صول الفقہ" میں حدیثوں کو  اجراء کے لحاظ سے اسے متواتر اور احد روایات میں تقسیم کیا گیا ہے۔ متواتر روایتوں کی سند اور اعتبار میں کوئی فرق نہیں ہے۔ اصل بحث ان روایات کو دیکھنے کے طریقے سے ہے جو سند اور اجراء کے لحاظ سے تواتر کی سطح تک نہیں پہنچتی ہیں اور اصطلاح میں "اخبار احد" کا حصہ سمجھی جاتی ہیں۔

 

  شیخ مفید نے اس طرح کی روایت کی حجیت اور اعتبارکو اس طرح بیان کرتےہیں:

«فأما خبر الواحد القاطع للعذر فهو الّذی یقترن إلیه دلیل یفضی بالناظر فیه إلى العلم بصحة مخبره و ربما کان الدلیل حجة من عقل و ربما کان شاهدا من عرف و ربما کان إجماعا بغیر خلف فمتى خلا خبر الواحد من دلالة یقطع بها على صحة مخبره فإنه کما قدمناه لیس بحجة و لا موجب علما و لا عملا على کل وجه»

البتہ وہ خبر جو عذر کے لیے فیصلہ کن ہے وہ خبر ہے جو اس وجہ کے ساتھ ہو کہ اس پر اجتہاد کرنے والے فقیہ کو اس بات کا علم اور یقین آجائے کہ اس خبر کا مفاد صحیح ہے۔ کبھی یہ استدلال اور قرینه عقلی دلیل ہوتی ہے، کبھی یہ حسب روایت شاهد ہوتی ہے اور کبھی ایسا اجماع ہوتا ہے جس پر کسی کو اعتراض نہیں ہوتا۔ جب بھی ان مفید شواہد میں سے ایک بھی معلومات نامکمل اور علم سے خالی ہو تو وہ ثبوت نہیں ہے اور فقیہ کے لیے علم اور یقین فراہم نہیں کرتا اور اس مفاد کی بنیاد پر کسی بھی طرح عمل نہیں ہو سکتا۔

مفید، محمد بن محمد، نبرد جمل / ترجمه الجمل و النصرة لسید العترة فی حرب البصرة، ص23- تهران، چاپ: اول، 1383 ش.

مندرجہ بالا تمہید کی بنیاد پر شیخ مفید نے تاریخی واقعات پیش کرنے کی کوشش کی ہے کہ  اس کا قاری اس بات کا ثبوت حاصل کر سکتا ہے کہ اہل جمل اور اس کے واقعات کے بارے میں عقیدہ درست ہے اور ان واقعات کو اپنے راستے کے لیے روشنی کے طور پر استعمال کرنے کے قابل ہو۔

نتیجہ: مندرجہ بالا  مقدمات کے مطابق یہ بات واضح ہے کہ شیخ مفید نے اپنی کتابوں میں جو روایات اور خبرواحدنقل کی ہیں,  اس کے اجراء کے لیے قرینہ موجود ہونے کی وجہ سے علم اور اعتماد اس کے لیے کارآمد رہا ہے۔

1/3۔ عقلی دلیل:

کسی روایت کے مضمون کی عقلی دلیل کے ساتھ مطابقت اس کے جاری کرنے کے لیے ایک اہم دلیل ہے۔ مثال کے طور پر وہ احادیث جو اہل بیت علیہم السلام کی مطلق عصمت پر دلالت کرتی ہیں جو قطعی دلیل کے مطابق ہیں۔  لہٰذا اگر کوئی روایت اس عقلی مفروضے کے مطابق ہو تو وہ صحیح ہے۔ کسی مقدمے میں متواتر روایتوں کا ہونا موضوع کو جاری کرنے کے عقلی دلائل میں سے ایک ہے۔

3/2۔ عقلی اور عرفی دلیل:

عقلی دلیل کے ساتھ مطابقت  روایت جاری کرنے کی ایک اور دلیل ہے۔ مثال کے طور پر لوگوں کے درمیان لین دین کے معاملات میں اگر کسی روایت کا مقصد عقلی قانون پر دستخط کرنا تھا تو وہ حجت ہے۔     مثال کے طور پر ایسی روایت جو اس بات پر دلالت کرتی ہو کہ لین دین کا موضوع معلوم ہونا چاہیے یا غبنی لین دین (ایسا سودا جس میں عدل و انصاف نہ پایا جاتا ہو اور فریقین میں سے ایک انتہائی پشیمان ہو) صحیح نہیں ہے۔

3/3۔ اجماع کے ساتھ روایت کے مطابقت کا اصول یا شیعہ علماء کا مشہور قول:

  یہ ثبوت شیعہ علماء کے درمیان روایات کی منتقلی کے لیے اہم ترین دلیلوں میں سے ایک ہے۔ شیعہ علماء نے طویل عرصے سے ان روایات کو مستند سمجھا ہے جو ائمہ کے اصحاب کے درمیان مقبول اور عام تھیں اور ہر کوئی ان کی پیروی کرتا تھا۔

/43۔ مشہور اصول اور مشہور روایت کی کتابوں میں روایت کے ذکر کا ثبوت:

  یہی وجہ ہے کہ مرحوم کلینی نے اپنی کتاب اصول کافی کے شروع میں صحابہ کرام میں سے مشہور و معروف اصولوں سے روایات جمع کرنے کی بات کی ہے۔  اسی طرح کا دعویٰ شیخ صدوق من لا یحضرہ الفقیہ اور شیخ طوسی اپنی کتاب کے تعارف میں تہذیب الاحکام کے شروع میں بھی کرتے ہیں۔

/53۔ قرینه استفاضه اور طریقوں کی کثرت:

  یہ سب سے اہم  عرفی اور عقلی دلائل میں سے ایک ہے۔ احتمالات کے حساب کے قانون کی بنیاد پر، عقلا کسی کہانی کے راویوں کی کثرت سے یقین اور عام علم تک پہنچتے ہیں - خواہ ان کی کوئی خاص تصدیق نہ ہو یا بعض راویوں کی ترمیم کی گئی ہو۔   عقلا کے اس طرز عمل کی حکمت یہ ہے کہ ہر طریقہ ہمارے اندر واقعہ کی سچائی کا کوئی نہ کوئی شبہ اور احتمال پیدا کرتا ہے، اس شبہ کی کثرت اور مخالف شواہد کی عدم موجودگی سے عقلا یقین اور صحیح شبہ تک پہنچ جاتے ہیں۔  شارع بھی علم اور یقین کو روایت سمجھنے میں حجت  مانتے  ہیں۔

نتیجہ: شیخ مفید کے طریقہ اجتہاد میں، اگر کوئی روایت متواترہ نہ ہو، بعض دلائل کے باوجود اس کی سند اور اعتبار متواتر روایت سے مختلف نہیں ہے۔

/63۔ شیخ مفید کی کتابوں کی تالیف کے طریقہ پر اصول کا اطلاق

  روایات اور شرعی تجاویز کی توثیق میں جن بنیادی اصولوں اور اجتہاد پر بحث کی گئی ہے اس کا براہ راست اثر شیخ مفید کے علمی، فقہی اور تاریخی کاموں کی تالیف پر پڑاہے۔ یہ متقی عالم اپنی تاریخی کتاب ارشاد کے شروع میں لکھتے ہیں:

«... فإنی مُثْبِتٌ بتوفیق الله و معونته ما سألتَ أیدک الله إثباتَه من أسماء أئمة الهدى علیهم السلام و تاریخ أعمارهم و ذکر مشاهدهم و أسماء أولادهم و طرف من أخبارهم المفیدة لعلم أحوالهم لتقف على ذلک وقوف العارف بهم و یظهر لک الفرق ما بین الدعاوی و الاعتقادات فیهم فتمیز بنظرک فیه ما بین الشبهات منه و البینات ...»

مفید، محمد بن محمد، الإرشاد فی معرفة حجج الله على العباد، ج‏1 ؛ ص4، قم، چاپ: اول، 1413 ق.

"اور پھر، خدا کے فضل اور اس کی مدد سے، میں اس کتاب میں بتاؤں گا کہ آپ کیا ثابت کرنا چاہتے ہیں، راہنمائی کرنے والے ائمہ کے ناموں، ان کی زندگی کی تاریخیں (اور ان کی زندگی کا دورانیہ)،  اوران کی شہادت کامقام، ان کے بچوں کے نام ، ان کی زندگی کے بہاؤ سے، جو ان کے حالات کے بارے میں علم کا سبب بنا  ان کے بارے میں مکمل معلومات حاصل کرنا اور مختلف آراء اور عقائد کے درمیان فرق کرنا۔ ان کے بارے میں اظہار خیال، اور مشکوک مواد کو حقائق سے الگ کرنے کے لیے...»

مفید، محمد بن محمد، الإرشاد للمفید / ترجمه رسولى محلاتى، ج‏1 ؛ ص1، تهران، چاپ: دوم، بى تا.

اس تمہید کی بنا پر شیخ مفید نے تاریخ معصومین سے روایتیں اور نصیحتیں جمع کرنے کی کوشش کی ہے، جو مکلفین اور مخاطبین کے لیے مفید ثابت ہوں گی۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ شیخ مفید کے نزدیک اس کتاب میں روایات اور موضوعات عقلی دلائل، کثرت طریق، مشہور و اجماع وغیرہ کی وجہ سے معتبر رہے ہیں۔

ارشاد کے علاوہ شیخ مفید اپنی اہم ترین فقہی کتاب ’’ مقنعه ‘‘ کے شروع میں لکھتے ہیں:

«جمع مختصر فی الأحکام و فرائض الملة و شرائع الإسلام لیعتمده المرتاد لدینه و یزداد به المستبصر فی معرفته و یقینه و یکون إماما للمسترشدین و دلیلا للطالبین و أمینا للمتعبدین یفزع إلیه فی الدین و یقضى به على المختلفین»

"یہ کتاب واجبات مکلفین اور اسلامی قوانین کے احکام ومسائل کی مختصر تالیف ہے تاکہ دین کے چاہنے والے اس پر اعتماد کر سکیں۔  اور جو دینی معارف کو جاننا چاہتا ہے اور یقین چاہتا ہے اس کتاب پر قائم رہنے سے اس کے یقین اور علم میں اضافہ ہوگا۔  اور یہ کتاب ان لوگوں کی امام اور رہنما ہے جو ترقی اور رہنمائی چاہتے ہیں، مذہبی لوگوں کے متلاشیوں اور معتمدوں کے لیے اس کتاب کی تعلیمات میں پناہ لینے اور متنازعہ امور کو ختم

کرنے کا سبب ہے۔"

بغدادى، مفید، محمّد بن محمد بن نعمان عکبرى، المقنعة (للشیخ المفید)، ص: 27، در یک جلد، کنگره جهانى هزاره شیخ مفید - رحمة الله علیه، قم - ایران، اول، 1413 ه‍ ق

اس انتہائی اہم اور کلیدی تمہید کی بنا پر، جو شیخ مفید کے اجتہاد کی ایک اہم ترین بنیاد پر دلالت کرتا ہے، وہ فتویٰ میں ایسے ذرائع اور روایات کا حوالہ دیتے ہیں جو اعتماد اور علم اور خدائی فرائض کی انجام دہی کے لیے مفید ہیں۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ شیخ مفید کی رائے میں اس فقہی کتاب کا مواد عقلی، روایتی اور قرآنی دونوں اعتبار سے صحیح دلائل پر مبنی ہے۔ اپنی کتاب کے آغاز میں انہوں نے سامعین سے یہ عہد کیا ہے کہ وہ غیر معتبر ذرائع سے دور رہیں اور ان کی بنیاد پر کوئی رائے قائم نہ کریں۔

    اس کی بنیاد شیخ مفید کی تاریخی کتب میں بھی دیکھی جا سکتی ہے۔ وہ جمل کتاب کے تعارف میں لکھتے ہیں:

  «فقد جمعت لک أیدک الله کل ما صدر عنهم و أثبته‏ فی هذا الکتاب برهانا یفضی الناظر فیه إلى صحة الاعتقاد فی أحکام القوم بأسمائهم بأعمالهم و ما فیها من الکفر و الإیمان و الطاعة و العصیان و التبین و الضلال لتعلم وفقک الله بالنظر و الاعتبار و تخرج بذلک من التقلید الموبق لصاحبه‏ لتظفر بالحق و یزول عنک الاشتباه الذی التبس علیک الأمر فیما کان هناک‏»

مفید، محمد بن محمد، الجمل و النصرة لسید العترة فی حرب البصرة، ص48، 1جلد، دار المفید - قم (ایران)، چاپ: 1، 1413 ه.ق.

"اور اس تالیف میں، میں نے آپ کے لیے فراہم کیا ہے - خدا آپ کو خوش رکھے - جو کہا گیا ہے، اور میں نے ایک  دلیل کو ثابت کیا ہے کہ جو بھی اسے دیکھتا ہے وہ ان کے اور ان کے طرز عمل کے بارے میں صحیح عقیدہ تلاش کرسکتا ہے۔  اور وہ سمجھے کہ کفر، ایمان، نافرمانی، اطاعت، گمراہی اور ہدایت کیسی ہے  اور مجھے امید ہے کہ آپ اس سے سبق حاصل کرنے میں کامیاب ہوں گے اور گمراہ کن تقلید کی حالت سے نکل کر حق تک پہنچ جائیں گے اور جو گمراہی اور گمراہی کا باعث ہے وہ آپ سے دور ہو جائے گا۔"

مفید، محمد بن محمد، نبرد جمل / ترجمه الجمل و النصرة لسید العترة فی حرب البصرة، ص23- تهران، چاپ: اول، 1383 ش.

مندرجہ بالا مقدمہ کی بنیاد پر شیخ مفید نے کچھ تاریخی واقعات پیش کرنے کی کوشش کی ہے کہ قاری اس بات کا ثبوت حاصل کر سکے کہ افراد اور واقعات کے بارے میں ان کا عقیدہ درست ہے اور وہ ان واقعات کو اپنے راستے کے لیے روشنی کے طور پر استعمال کر سکتا ہے۔

نتیجہ: مندرجہ بالا مقدمہ کے مطابق یہ بات واضح ہے کہ شیخ مفید نے اپنی کتابوں میں جو روایات اور خبریں نقل کی ہیں۔ اس کے اجراء کے لیے دلائل موجود ہونے کی وجہ سے مفید علم اور یقین   پیدا ہوا ہے۔

  4. شیخ مفید کا فقہ، حدیث اور تاریخ پر مبنی نقطہ نظر کا اظہار

اجتہاد کے مندرجہ بالا نکتہ کو مدنظر رکھتے ہوئے اب ہم شیخ مفید کی شہادت حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کے بارے میں ان کے فقہی، فتاوی، تاریخی اور احادیث مبارکہ کا جائزہ لیں گے:

4/1۔ مقنعه میں شیخ مفید کی رائے:

شیخ مفید نے فقہ و فتاویٰ کے اپنے سب سے اہم اور جامع تصنیف جو کہ مقنعه ہے میں درج ذیل روایت کو بخش زیارت میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی مختصر زیارت کے باب میں شامل کیا ہے کہ  جس کا اظہار ہم اس جملے میں کچھ وضاحت کے ساتھ ذکرکرتے ہیں:

«ثم قف بالروضة و زر فاطمة علیها السلام فإنها هناک مقبورة: پھر قبرستان میں کھڑے ہو کر فاطمہ سلام اللہ علیہا کی زیارت کرو کیونکہ ان کی قبر اسی علاقے میں ہے۔

فإذا أردت زیارتها فتوجه إلى القبلة فی الروضة و قل: اور جب تم اس کی زیارت کرنا چاہو تو روضہ میں قبلہ کی طرف رخ کرو اور کہو:

السلام علیک یا رسول الله: آ پ پر سلام ہو یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم

  السلام على ابنتک الصدیقة الطاهرة: آ پ کی بیٹی صدیقہ اور طاہرہ کو سلام

  السلام علیک یا فاطمة بنت رسول الله: سلام ہو آپ پر اے فاطمہ بنت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم

السلام علیک أیتها البتول الشهیدة الطاهرة: سلام ہو آپ پر اے بتول شاہدہ طاہرہ

مندرجہ بالا جملہ میں حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت کا حوالہ دیا گیا ہے۔ یہ بات مسلسل زیارت کے حوالے سے مضبوط اور ثابت ہوتی ہے جس میں حقوق غصب کرنے اور صدیقہ طاہرہ سلام اللہ علیہا پر بہت سی سختیوں کا ذکر ہے۔  شیخ مفید بیان کرتے ہیں:

 لعن الله من ظلمک خدا ہر اس شخص پر لعنت کرے جس نے آپ پر ظلم کیا۔

 و منعک حقک: اور اس نے تمہیں تمہارے حق سے منع کیا۔

 

 و دفعک عن إرثک: اور تمہیں تمہاری میراث سے نکال دیا۔

 و لعن الله من کذّبک: اور خدا اس پر لعنت کرے جس نے آپ کو جھٹلایا

و أعنَتکِ: اور اس نے آپ کو انتہائی سختی اور مشقت میں موت کے قریب کر دیا۔

و غصّصک بریقک: خدا اس شخص پر لعنت کرے جس نے آپ کو اتنا دکھ پہنچایا

 یہ معلوم ہونا چاہیے کہ "غوث" ثلاثی مزید باب تفعیل ریشه «غصص» اس کا مصدر«الغُصّة» ہے۔

فصیح عربی استعمال میں، غم ایک ایسی حالت ہے جس میں کسی شخص کے حلق کے آخر میں ہڈی یا اس جیسی کوئی چیز پھنس جاتی ہے (دھیان دیں: حلق کے اوپر نہیں! کیونکہ اسے برداشت کرنا آسان ہے) جو اسے سانس لینے یا پانی پینے سے روکتا ہے۔  اور اس شخص کو مسلسل تناؤ، تنگی اور انتہائی شدید دباؤ میں ڈالیں - جیسے دم گھٹنے یا مسلسل ڈوبنے کی حالت۔ یہ حالت کسی شخص کی سب سے مشکل ذہنی اور جسمانی حالت کی نشاندہی کرتی ہے۔

فیومى، احمد بن محمد، المصباح المنیر فى غریب الشرح الکبیر للرافعى، ص448، قم، چاپ: دوم، 1414 ه.ق.

فیروز آبادى، محمد بن یعقوب، القاموس المحیط، ج‏2 ؛ ص475، بیروت، چاپ: اول، 1415 ه.ق

موسى، حسین یوسف، الإفصاح ،ج‏1 ؛ ص453، قم، چاپ: چهارم، 1410 ه.ق.

اس تمہید سے یہ بات واضح ہو جاتی ہے کہ " و غصّصک بریقک " کا مطلب ہے کہ خدا ان لوگوں پر لعنت کرے جنہوں نے تم میں "غم کی کیفیت" پیدا کی - وہ بھی بڑی شدت کے ساتھ - اس طرح کہ آفت کی شدت کی وجہ سے آپ کا لعاب دہن۔ ہڈی کی طرح ہے حلق میں تھا اور... امیر المومنین علیہ السلام کا بھی وہی حال تھا جو صدیقہ طاہرہ سلام اللہ علیہا کا تھا۔  اس نے کہا: میں نے کئی سال انتظار کیا جبکہ " و فی العینِ قذًى و فی‏ الحلقِ‏ شَجاً " کا مطلب ہے "گلے میں ہڈی اور آنکھ میں کانٹا":

ابن بابویه، محمد بن على، علل الشرائع، ج‏1 ؛ ص151، قم، چاپ: اول، 1385ش / 1966م.

شیخ مفید ب ادامہ  دیتے ہوءےیبان کرتے ہیں:

و أدخل الذل بیتک: اور خدا ان پر لعنت کرے جنہوں نے آپ کی عزت کو پامال کیا اور آپ کے گھر میں ذلت اور بے بسی لائی۔

و لعن الله أشیاعهم و ألحقهم بدرک الجحیم: اور خدا ان کے پیروکاروں پر لعنت کرے اور انہیں جہنم کی سمجھ میں شامل کرے۔

صلى الله علیک یا بنت رسول الله: آپ پر خدا کی رحمتیں ہوں، اے خدا کے رسول کی بیٹی

و على أبیک و بعلک و ولدک الأئمة الراشدین: اور آپ کے والداور بچوں پر خدا کی رحمتیں ہوں، جو صالح امام ہیں۔

علیک و علیهم السلام و رحمة الله و برکاته

بغدادى، مفید، محمّد بن محمد بن نعمان عکبرى، المقنعة (للشیخ المفید)، ص: 459، در یک جلد، کنگره جهانى هزاره شیخ مفید - رحمة الله علیه، قم - ایران، اول، 1413 ه‍ ق

اس گھر میں ذلت و رسوائی لانا جسے آسمانی فرشتے عزیز سمجھتے تھے، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی وفات کے بعد اہل بیت علیہم السلام کے مصائب کی انتہا کو ظاہر کرتا ہے۔

2/4۔ امالی میں شیخ مفید کا نظریہ

"امالی" میں اسلام کی اخلاقی، مذہبی اور تاریخی روایات شامل ہیں۔ شیخ مفید نے 7 سال کے دوران، رمضان المبارک کے مقدس مہینوں میں اور 42 مجالس میں اس کتاب کےاملاء کیے ہیں۔

مفید، محمد بن محمد، الأمالی (للمفید)، ص1 و ص350، قم، چاپ: اول، 1413ق.

یہ کتاب شیعہ حدیث کی سب سے مستند کتابوں میں سے ایک ہے۔  شیخ مفید نے اس کتاب کی احادیث کو کئی مجالس میں حدیث کے متلاشیوں کو املاءکیاہے۔  یہ کتاب بڑے ذوق و شوق اور لطافت سے ترتیب دی گئی ہے۔

اس نفیس داستانی کتاب کی روایات کا جائزہ لینے سے یہ بات واضح ہو جاتی ہے کہ شیخ مفید نے کتاب میں متعدد مقامات پر حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی حقانیت اور مظلومیت سے متعلق روایات پیش کی ہیں جن کا ذکر ہے:

  4/2/1. روایت اول:

درج ذیل روایت حضرت زینب سلام اللہ علیہا کے اس قول سے ہے جس میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے خاندان کی سختیوں اور مصائب کا ذکر ہے:

«قَالَ أَخْبَرَنِی أَبُو بَکْرٍ مُحَمَّدُ بْنُ عُمَرَ الْجِعَابِیُّ قَالَ أَخْبَرَنَا أَبُو عَبْدِ اللَّهِ جَعْفَرُ بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ جَعْفَرٍ الْحَسَنِیُّ قَالَ حَدَّثَنَا عِیسَى بْنُ مِهْرَانَ عَنْ یُونُسَ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ سُلَیْمَانَ الْهَاشِمِیِّ عَنْ أَبِیهِ عَنْ جَدِّهِ عَنْ زَیْنَبَ بِنْتِ عَلِیِّ بْنِ أَبِی طَالِبٍ ع قَالَتْ‏ لَمَّا اجْتَمَعَ رَأَیُ أَبِی بَکْرٍ عَلَى مَنْعِ فَاطِمَةَ ع فَدَکَ‏ وَ الْعَوَالِیَ وَ أَیِسَتْ مِنْ إِجَابَتِهِ لَهَا عَدَلَتْ إِلَى قَبْرِ أَبِیهَا رَسُولِ اللَّهِ ص‏فَأَلْقَتْ نَفْسَهَا عَلَیْهِ وَ شَکَتْ إِلَیْهِ مَا فَعَلَهُ الْقَوْمُ بِهَا وَ بَکَتْ حَتَّى بَلَّتْ تُرْبَتَهُ ع بِدُمُوُعِهَا وَ نَدَبَتْهُ ثُمَّ قَالَتْ فِی آخِرِ نُدْبَتِهَا

قَدْ کَانَ بَعْدَکَ أَنْبَاءٌ وَ هَنْبَثَةٌ

لَوْ کُنْتَ شَاهِدَهَا لَمْ تَکْثُرِ الْخُطَبُ‏

وَ اخْتَلَّ قَوْمُکَ فَاشْهَدْهُمْ فَقَدْ نَکَبُوا

إِنَّا فَقَدْنَاکَ فَقْدَ الْأَرْضِ وَابِلَهَا

قَدْ کَانَ جَبْرَئِیلُ بِالْآیَاتِ یُؤْنِسُنَا

فَغِبْتَ عَنَّا فَکُلُّ الْخَیْرِ مُحْتَجِبٌ‏

فَکُنْتَ بَدْراً وَ نُوراً یُسْتَضَاءُ بِهِ‏

عَلَیْکَ یَنْزِلُ مِنْ ذِی الْعِزَّةِ الْکُتُبُ

تَجَهَّمَتْنَا رِجَالٌ‏ وَ اسْتُخِفَّ بِنَا

بَعْدَ النَّبِیِّ وَ کُلُّ الْخَیْرِ مُغْتَصَبٌ‏

سَیَعْلَمُ الْمُتَوَلِّی ظُلْمَ حَامَّتِنَا

یَوْمَ الْقِیَامَةِ أَنَّى سَوْفَ یَنْقَلِبُ‏

مِنَ الْبَرِیَّةِ لَا عَجَمٌ وَ لَا عَرَبٌ‏

فَقَدْ لَقِینَا الَّذِی لَمْ یَلْقَهُ أَحَدٌ

لَنَا الْعُیُونُ بِتِهْمَالٍ لَهُ سَکَبٌ‏

فَسَوْفَ نَبْکِیکَ مَا عِشْنَا وَ مَا بَقِیَتْ

مفید، محمد بن محمد، الأمالی (للمفید)، ص40، قم، چاپ: اول، 1413ق.

8- "عبداللہ بن محمد بن سلیمان ہاشمی اپنے والد سے اپنے دادا سے حضرت زینب بنت علی سے روایت کرتے ہیں کہ آپ نے فرمایا:  جب ابوبکر نے فدک اور عوالی سے فاطمہ (سلام اللہ علیہا) پر پابندی لگانے کا فیصلہ کیا  اور فاطمہ (س) اس بات سے مایوس ہوئیں کہ ابوبکر فدک واپس دے دیں گے، وہ اپنے والد رسول خدا (ص) کی قبر پر گئیں اور آپ کی قبر پر خود کو گرا دیا اور ان لوگوں کے ساتھ کئے گئے مصیبت کی  شکایت کی۔ اور اتنا رویا کہ قبر شریف حضور کے آنسوؤں سے تر ہو گئی۔  اور چیخ ماری اور آخر میں وہ سب کچھ بتایا جو پیش انا تھا: بے شک آپ کے بعد یہ خبریں اور ہنگامہ برپا ہوا کہ اگر آپ ہوتے تو یہ تمام پریشانیاں اور مشکلات پیش نہ آتیں۔

ہم نے آپ کو اس زمین میں کھو دیا ہے جو بارش سے محروم ہے اور آپ کی قوم میں انتشار پیدا ہو گیا ہے اور گواہی دیں کہ وہ اپنا ایمان کھو چکے ہیں۔ جبرائیل مسلسل ہمارے مونس کی آیات لا رہے تھے۔  اور آپ ہم سے چھپ گئے اور آپ کے جانے سے تمام نیکیاں ہم سے چھپ گئیں۔ آپ ایک چمکتا ہوا چاند اور چمکتا ہوا نور تھے جس سے روشنی حاصل ہوئی اور آپ پر خدا کی طرف سے عظمت کے ساتھ کتاب نازل ہوئی۔  نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد متشدد چہروں والے لوگوں نے ہمارا سامنا کیا اور ہماری توہین اور تحقیر کی اور سارا خیرات ضائع ہو گیا۔  جس نے ہمارے گھر والوں پر ظلم کیا ہے اسے عنقریب معلوم ہو جائے گا کہ اسے قیامت کے دن کیا سامنا کرنا پڑے گا۔  ہم نے ایسے مصائب کا سامنا کیا ہے جن کا سامنا کسی بھی مخلوق کو، خواہ عرب ہو یا عجم، نے نہیں کیا۔  جب تک ہم زندہ ہیں اور جب تک ہماری آنکھیں ہیں، ہم تیرے نقصان کی قسم کھاتے ہیں اور اپنی آنکھوں سے غمگین ہیں۔"

مفید، محمد بن محمد، الأمالی (للمفید)، ص52، ترجمه استاد ولى - مشهد، چاپ: اول، 1364ش.

مندرجہ بالا روایت کے بارے میں درج ذیل نکات قابل غور ہیں:

پہلا نکتہ: صدیقہ طاہرہ سلام اللہ علیہا پر ابوبکر اور ان کی جماعت کے مظالم اتنے زیادہ تھے کہ انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی قبر میں پناہ لی۔ اس کے رنج و غم کی شدت ایسی رہی کہ آنسو متواتر بہتے  رہےاور ماتم کیا۔

دوسرا نکتہ: حضرت زہرا سلام اللہ علیہا نے اپنے مصائب کے اظہار کے لیے اشعار کا استعمال کیا۔  اس زمانے میں عربوں میں شاعری سب سے مضبوط ذریعہ تھی۔  عرب اہم ترین حقائق و واقعات کو پاکیزہ اور فصیح شاعری سے اگلی نسلوں تک پہنچاتے تھے۔

تیسرا نکتہ: لغت نگاروں نے "هنبثة" کے مندرجہ ذیل معنی بتائے ہیں:

1. ابن درید لکھتے ہیں:

«و الهَنابِث‏: الدواهی، الواحدة هَنْبَثَة، و هی الداهیة»

هنابث ، جمع مکسر ہے اور اس کا مطلب ہے منشیات اور مشکل امور، جس کا واحد هنبثة ہے، جس کا مطلب ہے مشکل معاملہ۔

ابن درید، محمد بن حسن، جمهرة اللغة، ج‏1 ؛ ص263، بیروت، چاپ: اول، 1988 م.

2.ابن اثیر لکھتے ہیں:

«الْهَنْبَثَةُ: واحدة الْهَنَابِثِ‏، و هى الأمور الشّداد المختلفة»

هنبثة اسکی جمع  هنابث ہے، جس کو کہا جاتا ہے کہ وہ شدید امور ہیں جو مسلسل جاری رہتے ہیں۔

ابن اثیر، مبارک بن محمد، النهایة فی غریب الحدیث و الأثر، ج‏5 ؛ ص278،  قم، چاپ: چهارم، 1367 ه.ش.

3. زبیدی تاج العروس میں لکھتے ہیں:

«و الهَنْبَثَةُ: الاخْتِلاطُ فی القَوْلِ. و الهَنَابِثُ‏: الدَّواهِی، و الأُمورُ و الأَخبارُ المُخْتَلِطَة»

هنبثة کا مطلب ہے گفتار میں ملاوٹ اور گڑبڑ۔ هنابث اس کی جمع ہے جس کا مطلب ہے  مختلف چیزیں اور خبریں جو حقیقت سے دور ہو۔

مرتضى زبیدى، محمد بن محمد، تاج العروس، ج‏3 ؛ ص280،  بیروت، چاپ: اول، 1414 ه.ق.

علمائے لغت کے نزدیک یہ کہا جا سکتا ہے کہ حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کو سخت مشکلات اور معاملات کا سامنا کرنا پڑا جس کی وجہ سے انسان اپنا سکون اورچین کھو بیٹھتا ہے۔

چوتھا نکتہ: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے گھر والوں کی تذلیل اوربے حرمتی کے علاوہ،

صدیقہ طاہرہ، خدا کے رسول کی عترت کی طرف " تَجهمّم قوم "لوگوں کی بغاوت اشاره  کیاہے، خدا ان پر اور ان کے اہل خانہ کو سلامت رکھے۔  لفظ  تَجهمّمکے مندرجہ ذیل معنی ہیں:

1.   «جهم:‏ الجیم و الهاء و المیم یدلُّ على خلاف البَشاشة و الطَّلاقة. یقال رجلٌ‏ جهمُ‏ الوجهِ أى کریهُهُ. و من ... و یقال‏ جَهَمْتُ‏ الرّجل و تجهَّمْتُه‏، إذا استَقْبَلتَه بوجهه‏»

جہم، جم، هاء ، اور میم کی ریشه سے ماخوذ ہے، جو علیحدگی اور طلاقت کے متضاد معنی پر دلالت کرتا ہے۔  کہا جاتا ہے کہ جہم الوجہ کے آدمی سے مراد گندا چہرہ ہے۔  کہا جاتا ہے کہ جهمت الرجل تجهمته وہ ہے جب تم اس سے بدصورت اور بدصورت چہرے کے ساتھ ملو!

ابن فارس، احمد بن فارس، معجم مقاییس اللغه، ج‏1 ؛ ص490، قم، چاپ: اول، 1404 ه.ق.

2.   «التجهم و العبوس‏ التجهّم‏: جهِمَ‏ فلانا یجهَمه‏ جَهما و تجهّمه‏ و له: استقبله بوجه کریه‏»

بدمزاج ہونے کا مطلب ہے ایک دوسرے کا سامنا ایک بدمزاج اور بدمزاج چہرے کے ساتھ کرنا.

موسى، حسین یوسف، الإفصاح، ج‏2 ؛ ص1305، قم، چاپ: چهارم، 1410 ه.ق.

علمائے کرام کے قول سے یہ بات واضح ہو جاتی ہے کہ حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کے اردگرد کے لوگ بدصورت چہروں والا تھا جن لوگوں نے ان کے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے گھر والوں کے ساتھ ناروا سلوک کرتے تھے۔

پانچواں نکتہ: صدیقہ طاہرہ کے اشعار کے مطابق اللہ تعالیٰ آپ کو سلامت رکھے، ان کے مصائب کی شدت ایسی تھی کہ ایسی تکلیف کسی اور کو نہیں ہوئی۔ اس سانحے کی گہرائی کا براہ راست تعلق اس حق سے ہے جو کھو گیا ہے۔

4/2/2. روایت دوم:

دوسری روایت مروان بن عثمان کی ہے، یہ روایت تلخ حقائق کے بارے میں بتاتی ہے جیسے کہ صدیقہ طاہرہ سلام اللہ علیہا کے گھر کو آگ لگانے کا حکم خلیفہ ثانی نے دیا تھا:

9 قَالَ أَخْبَرَنِی أَبُو بَکْرٍ مُحَمَّدُ بْنُ عُمَرَ الْجِعَابِیُّ قَالَ حَدَّثَنَا أَبُو الْحُسَیْنِ الْعَبَّاسُ بْنُ الْمُغِیرَةِ قَالَ حَدَّثَنَا أَبُو بَکْرٍ أَحْمَدُ بْنُ مَنْصُورٍ الرَّمَادِیُّ قَالَ حَدَّثَنَا سَعِیدُ بْنُ عُفَیْرٍ قَالَ حَدَّثَنِی ابْنُ لَهِیعَةَ عَنْ خَالِدِ بْنِ یَزِیدَ عَنِ ابْنِ أَبِی هِلَالٍ عَنْ مَرْوَانَ بْنِ عُثْمَانَ قَالَ‏ لَمَّا بَایَعَ النَّاسُ أَبَا بَکْرٍ دَخَلَ عَلِیٌّ ع وَ الزُّبَیْرُ وَ الْمِقْدَادُ بَیْتَ فَاطِمَةَ ع وَ أَبَوْا أَنْ یَخْرُجُوا فَقَالَ عُمَرُ بْنُ الْخَطَّابِ أَضْرِمُوا عَلَیْهِمُ الْبَیْتَ نَاراً  فَخَرَجَ الزُّبَیْرُ وَ مَعَهُ سَیْفُهُ فَقَالَ أَبُو بَکْرٍ عَلَیْکُمْ بِالْکَلْبِ فَقَصَدُوا نَحْوَهُ فَزَلَّتْ قَدَمُهُ وَ سَقَطَ إِلَى الْأَرْضِ وَ وَقَعَ السَّیْفُ مِنْ یَدِهِ فَقَالَ‏ أَبُو بَکْرٍ اضْرِبُوا بِهِ الْحَجَرَ فَضُرِبَ بِسَیْفِهِ الْحَجَرُ حَتَّى انْکَسَرَ وَ خَرَجَ عَلِیُّ بْنُ أَبِی طَالِبٍ ع نَحْوَ الْعَالِیَةِ  فَلَقِیَهُ ثَابِتُ بْنُ قَیْسِ بْنِ شَمَّاسٍ‏  فَقَالَ- مَا شَأْنُکَ یَا أَبَا الْحَسَنِ فَقَالَ أَرَادُوا أَنْ یُحْرِقُوا عَلَیَّ بَیْتِی وَ أَبُو بَکْرٍ عَلَى الْمِنْبَرِ یُبَایَعُ لَهُ وَ لَا یَدْفَعُ عَنْ ذَلِکَ وَ لَا یُنْکِرُهُ فَقَالَ لَهُ ثَابِتٌ وَ لَا تُفَارِقُ کَفِّی یَدَکَ حَتَّى أُقْتَلَ دُونَکَ فَانْطَلَقَا جَمِیعاً حَتَّى عَادَا إِلَى الْمَدِینَةِ وَ إِذَا فَاطِمَةُ ع وَاقِفَةٌ عَلَى بَابِهَا وَ قَدْ خَلَتْ دَارُهَا مِنْ أَحَدٍ مِنَ الْقَوْمِ وَ هِیَ تَقُولُ لَا عَهْدَ لِی بِقَوْمٍ أَسْوَأَ مَحْضَراً مِنْکُمْ تَرَکْتُمْ رَسُولَ اللَّهِ ص جِنَازَةً بَیْنَ أَیْدِینَا وَ قَطَعْتُمْ أَمْرَکُمْ بَیْنَکُمْ لَمْ تَسْتَأْمِرُونَا  وَ صَنَعْتُمْ بِنَا مَا صَنَعْتُمْ وَ لَمْ تَرَوْا لَنَا حَقّا

مفید، محمد بن محمد، الأمالی (للمفید)، ص ص49، قم، چاپ: اول، 1413ق.

9- مروان بن عثمان کہتے ہیں: جب لوگوں نے ابی بکر، کی بیعت کی تو علی (ع) زبیر اور مقداد حضرت فاطمہ (س) کے گھر میں داخل ہوئے اور باہر آنے سے انکار کردیا۔  عمر بن خطاب نے کہا: ان  لوگوں کےساتھ گھر کو آگ لگا دو۔ اس وقت زبیر تلوار لے کر باہر نکلا۔  ابوبکر نے کہا: اس کتے کو لے جاؤ، حملہ آوروں نے حملہ کیا، زبیر کا پاؤں پھسل کر زمین پر گرا، اور اس کے ہاتھ سے تلوار گر گئی۔  ابوبکر نے کہا: اپنی تلوار ایک چٹان پر مارو اور انہوں نے اسے پتھر پر مارا یہاں تک کہ وہ ٹوٹ گئی۔ علی بن ابی طالب (ع) گھر سے نکل کر نجد کے دیہات میں گئے اور راستے میں ثابت بن قیس بن شماس سے ملے۔ ثابت نے کہا: اے ابا الحسن کیا ہوا؟ اس نے کہا: وہ میرے گھر کو آگ لگانا چاہتے ہیں، اور ابوبکر منبر پر بیٹھے ہیں اور لوگوں سے بیعت لینے میں مصروف ہیں، اور ان حملوں کو نہ روکتے ہیں اور نہ مذمت کرتے ہیں۔    ثابت نے کہا: میں آپ سے اس وقت تک دستبردار نہیں ہوں گا جب تک میں آپ کے دفاع کے لیے راستے میں مارا نہ جاؤں۔ چنانچہ وہ ایک ساتھ مدینہ واپس آئے، جب گھر پہنچے تو دیکھا کہ فاطمہ دروازے کے پاس کھڑی ہیں اور گھر حملہ آوروں سے خالی تھا۔  اور آن حضرت نے آواز دی: میں نے تم سے زیادہ بدصورت کسی قوم کو نہیں  دیکھا، تم نے رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے جسد خاکی کو ہمارے پاس چھوڑ دیا اور آپس میں فیصلہ کیا کہ تم تنہا اس سے حکومت چھین لو گے ۔ اور تم نے ہم میں سے کسی کو اس پر تبصرہ کرنے کے لیے نہیں کہا، اور جو کچھ تم لے کر آئے وہ ہم پر لے آئے، اور تم نے ہمارے لیے کوئی حق نہیں سمجھا!

مفید، محمد بن محمد، الأمالی (للمفید)، ص61، ترجمه استاد ولى - مشهد، چاپ: اول، 1364ش.

مذکورہ بالا روایت حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کے ظلم کی انتہا کو ظاہر کرتی ہے جنہیں خلیفہ دوم کی طرف سے گھر کو جلانے کی دھمکی کا سامنا کرنا پڑا۔  یہ دھمکی اتنی سنگین اور موثر تھی کہ ایسا لگتا ہے کہ امیر المومنین علیہ السلام نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے بچوں کی جان بچانے کے لیے گھر سے نکلے تھے۔ سقیفہ کے سرداروں نے اہل بیت علیہم السلام کے حقوق پر ڈاکہ ڈالنے کے لیے، حتیٰ کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاکیزہ جسم کا بھی خیال نہیں کیا۔ یہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے رد عمل کے ساتھ ملا۔

4/2/3. روایت سوم

درج ذیل روایت فاطمہ سے متعلق اہم ترین سند میں سے ایک ہے۔  امام حسین علیہ السلام کے کلام سے یہ روایت عترت خاندان کے واقعات سے متعلق ہے:

7 قَالَ حَدَّثَنَا أَبُو جَعْفَرٍ مُحَمَّدُ بْنُ عَلِیِّ بْنِ الْحُسَیْنِ قَالَ حَدَّثَنَا أَبِی قَالَ حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ إِدْرِیسَ قَالَ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ الْجَبَّارِ عَنِ الْقَاسِمِ بْنِ مُحَمَّدٍ الرَّازِیِّ عَنْ عَلِیِّ بْنِ مُحَمَّدٍ الْهُرْمُزَانِیِ‏  عَنْ عَلِیِّ بْنِ الْحُسَیْنِ بْنِ عَلِیٍّ عَنْ أَبِیهِ الْحُسَیْنِ علیهم السلام قَالَ: لَمَّا مَرِضَتْ فَاطِمَةُ بِنْتُ النَّبِیِّ ص وَصَّتْ إِلَى عَلِیٍّ ص أَنْ یَکْتُمَ أَمْرَهَا وَ یُخْفِیَ خَبَرَهَا وَ لَا یُؤْذِنَ أَحَداً بِمَرَضِهَا فَفَعَلَ ذَلِکَ وَ کَانَ یُمَرِّضُهَا بِنَفْسِهِ وَ تُعِینُهُ عَلَى ذَلِکَ أَسْمَاءُ بِنْتُ عُمَیْسٍ رَحِمَهَا اللَّهُ عَلَى اسْتِسْرَارٍ بِذَلِکَ کَمَا وَصَّتْ بِهِ- فَلَمَّا حَضَرَتْهَا الْوَفَاةُ وَصَّتْ أَمِیرَ الْمُؤْمِنِینَ ع أَنْ یَتَوَلَّى أَمْرَهَا وَ یَدْفِنَهَا لَیْلًا وَ یُعَفِّیَ قَبْرَهَا  فَتَوَلَّى ذَلِکَ أَمِیرُ الْمُؤْمِنِینَ ع وَ دَفَنَهَا وَ عَفَّى مَوْضِعَ قَبْرِهَا فَلَمَّا نَفَضَ یَدَهُ مِنْ تُرَابِ الْقَبْرِ هَاجَ بِهِ الْحُزْنُ فَأَرْسَلَ دُمُوعَهُ عَلَى خَدَّیْهِ وَ حَوَّلَ وَجْهَهُ إِلَى قَبْرِ رَسُولِ اللَّهِ ص فَقَالَ السَّلَامُ عَلَیْکَ یَا رَسُولَ اللَّهِ مِنِّی وَ السَّلَامُ عَلَیْکَ مِنِ ابْنَتِکَ وَ حَبِیبَتِکَ- وَ قُرَّةِ عَیْنِکَ وَ زَائِرَتِکَ وَ الْبَائِتَةِ فِی الثَّرَى بِبُقْعَتِکَ وَ الْمُخْتَارِ لَهَا اللَّهُ سُرْعَةَ اللَّحَاقِ بِکَ قَلَّ یَا رَسُولَ اللَّهِ عَنْ صَفِیَّتِکَ صَبْرِی وَ ضَعُفَ عَنْ سَیِّدَةِ النِّسَاءِ تَجَلُّدِی-  إِلَّا أَنَّ فِی التَّأَسِّی لِی بِسُنَّتِکَ وَ الْحُزْنِ الَّذِی حَلَّ بِی بِفِرَاقِکَ مَوْضِعَ التَّعَزِّی فَلَقَدْ وَسَّدْتُکَ فِی مَلْحُودِ قَبْرِکَ بَعْدَ أَنْ فَاضَتْ نَفْسُکَ عَلَى صَدْرِی وَ غَمَّضْتُکَ بِیَدِی‏  وَ تَوَلَّیْتُ أَمْرَکَ بِنَفْسِی نَعَمْ وَ فِی کِتَابِ اللَّهِ أَنْعَمُ الْقَبُولِ‏ - إِنَّا لِلَّهِ وَ إِنَّا إِلَیْهِ راجِعُونَ‏- لَقَدِ اسْتُرْجِعَتِ الْوَدِیعَةُ  وَ أُخِذَتِ الرَّهِینَةُ وَ اخْتُلِسَتِ الزَّهْرَاءُ فَمَا أَقْبَحَ الْخَضْرَاءَ وَ الْغَبْرَاءَ یَا رَسُولَ اللَّهِ أَمَّا حُزْنِی فَسَرْمَدٌ وَ أَمَّا لَیْلِی فَمُسَهَّدٌ- لَا یَبْرَحُ الْحُزْنُ مِنْ قَلْبِی أَوْ یَخْتَارَ اللَّهُ لِی دَارَکَ الَّتِی أَنْتَ فِیهَا مُقِیمٌ کَمَدٌ مُقَیِّحٌ وَ هَمٌّ مُهَیِّجٌ سَرْعَانَ مَا فَرَّقَ بَیْنَنَا وَ إِلَى اللَّهِ أَشْکُو- وَ سَتُنَبِّئُکَ ابْنَتُکَ بِتَضَافُرِ أُمَّتِکَ‏  عَلَیَّ وَ عَلَى هَضْمِهَا حَقَّهَا فَاسْتَخْبِرْهَا الْحَالَ فَکَمْ مِنْ غَلِیلٍ مُعْتَلِجٍ بِصَدْرِهَا لَمْ تَجِدْ إِلَى بَثِّهِ سَبِیلًا وَ سَتَقُولُ وَ یَحْکُمُ اللَّهُ‏ وَ هُوَ خَیْرُ الْحاکِمِینَ* سَلَامٌ عَلَیْکَ یَا رَسُولَ اللَّهِ سَلَامَ مُوَدِّعٍ لَا سَئِمٍ وَ لَا قَالٍ فَإِنْ أَنْصَرِفْ فَلَا عَنْ مَلَالَةٍ وَ إِنْ أُقِمْ فَلَا عَنْ سُوءِ ظَنٍّ بِمَا وَعَدَ اللَّهُ الصَّابِرِینَ وَ الصَّبْرُ أَیْمَنُ‏ وَ أَجْمَلُ وَ لَوْ لَا غَلَبَةُ الْمُسْتَوْلِینَ عَلَیْنَا لَجَعَلْتُ الْمُقَامَ‏  عِنْدَ قَبْرِکَ لِزَاماً وَ لَلَبِثْتُ‏  عِنْدَهُ مَعْکُوفاً وَ لَأَعْوَلْتُ إِعْوَالَ الثَّکْلَى عَلَى جَلِیلِ الرَّزِیَّةِ فَبِعَیْنِ اللَّهِ تُدْفَنُ ابْنَتُکَ سِرّاً وَ تُهْتَضَمُ حَقَّهَا قَهْراً وَ تُمْنَعُ إِرْثَهَا جَهْراً وَ لَمْ یَطُلِ الْعَهْدُ وَ لَمْ یَخْلُ‏  مِنْکَ الذِّکْرُ فَإِلَى اللَّهِ یَا رَسُولَ اللَّهِ الْمُشْتَکَى وَ فِیکَ أَجْمَلُ الْعَزَاءِ- وَ صَلَوَاتُ اللَّهِ عَلَیْکَ وَ عَلَیْهَا وَ رَحْمَةُ اللَّهِ وَ بَرَکَاتُهُ‏ .

علی بن محمد ہرمزنی نے امام سجاد سےانہونے اپنے والد امام حسین علیہ السلام سے روایت کی ہے کہ آپ نے فرمایا: جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی صاحبزادی فاطمہ  سلام اللہ علیہا بیمار ہوئیں تو انہوں نے علی علیہ السلام کو وصیت کی کہ آپ مرے معاملات کو پوشیدہ رکھیں اور بیماری کی کسی کو اطلاع نہ دیں، آپ نے ایسا ہی کیا۔  اور خود علی علیہ السلام نے ان کی علاج کی اور اسماء بنت عمیس نے بھی خفیہ طور پرجیسا کہ فاطمہ (س) نے وصیت کی تھی اس کام میں ان کی مدد کی۔  چنانچہ جب وہ اپنی موت کے وقریب پہنچے تو اس نے امیر المومنین (علیہ السلام) کو وصیت کی کہ وہ ذاتی طور پر اس کا کام سنبھال لیں، رات کو دفن کریں، اور قبر کو پوشیدہ کر دیں (اس طرح زمین کو برابر کر دیں کہ قبر معلوم نہ ہو)۔ چنانچہ امیر المومنین (علیہ السلام) نے خود اس کام کو انجام دیا اور جناب زہراکو دفن کیا اور ان کی قبر کو پوشیدہ رکھا ۔  جب آپ  نے قبر خاک دالنے لگے تو آپ کے دل میں غم و اندوہ کی لہر دوڑ گئی تو آپ کے گال پر آنسوؤں کا سیلاب آ گیا اور زہراکے قبر کی طرف متوجہ ہوئے اور فرمایا:

"یا رسول اللہ میری طرف سے آپ پر سلام ہو۔  اور سلام ہو آپ پر آپ کی بیٹی کی طرف سے، آپ نے جس نور کو دیکھا، آپ کا زایر، اور وہ جو زمین کے بیچ میں آپ کی قبر میں سو رہا ہے۔اور وہ جس کو خدا نے جلد ہی آپ سے ملایا ہے۔

یا رسول اللہ، آپ کی برگزیدہ بیٹی سے جدائی سے میرا صبر ٹوٹ گیا ہے۔ اور میری قوت و طاقت عورتوں کے سردار کی جدائی میں کمزور ہو گئی ہے، سوائےآپ سنت کے غم میں اور اپ کے جدائی سے مجھ پر جو دکھ ہوا ہے  صبر اور تحمل کی گنجائش باقی ہے ۔   درحقیقت، میں نے آپ کو آپ کی قبر میں اس وقت رکھا جب روح القدس میرے سینے پر بہتا تھا (جب آپ کو زندہ کیا گیا تو آپ کا سر میرے سینے سے لگا ہوا تھا) اور میں نے آپ کو اپنے ہاتھ سے زمین کے نیچے چھپا دیا، اور میں نے ذاتی طور پر آپ کے معاملات کی ذمہ داری سنبھالی۔ ہاں، کتاب میں خدا ایک آیت ہے جو ہمیں کھلے بازوؤں سے مصیبت کو قبول کرنے پر مجبور کرتی ہے:  ’’ہم سب اللہ کے ہیں اور ہم سب کو اسی کی طرف لوٹ کر جانا ہے۔‘‘ البقرۃ: 156۔

سچی بات یہ ہے کہامانت واپس لے لیا گیا، اور یرغمال بنالیا گیا، اور زہرا  کومجھ سے بہت جلد چھین لی گئی۔ اے خدا کے رسول، اب میری آنکھوں میں آسمان اور زمین کتنے نیلے اور بدصورت لگ رہے ہیں! لیکن میری اداسی مستقل ہو گئی ہے، اور میری رات بیداری میں گزر رہی ہے، اداسی میرے دل سے کبھی نہیں نکلے گی جب تک کہ خدا میرے لئے وہی گھر منتخب نہ کرے جہاں اپ آباد ہو۔  مجھے ایک دکھ ہے۔ یہ بہت دل دہلا دینے والا ہے، اور مجھے ایک دلچسپ اداسی ہے، کتنی جلدی ہم الگ ہو گئے، میں خدا کی تعریف کرتا ہوں۔

اور عنقریب آپ کی بیٹی آپ کو میرے خلاف آپ کی قوم کی سازش اور اس کے حقوق غصب کرنے کی خبر دے گی، لہٰذا اس سے حالات کے بارے میں پوچھیں، کیونکہ اس کے سینے میں بہت جلتے ہوئے دکھ تھے اور اسے پھیلانے کا کوئی راستہ نہیں ملتا تھا۔ اور وہ جلد ہی آپ کو بتائے گی۔ اور یقیناً اللہ فیصلہ کرتا ہے اور وہ بہترین فیصلہ کرنے والا ہے۔

اے خدا کے رسول میں آپ کو سلام بھیجتا ہوں، ایسا الوداعی سلام جو نہ غصے کا ہو اور نہ ہی غمگین، پس اگر میں واپس آؤں تو ملامت اور غم سے ہو گا، اور اگر ٹھہروں گا تو اس وعدے کے شک سے باہر ہو گا۔ خدا راہنماؤں کو صبر نہ دے اور یقیناً صبر زیادہ بابرکت اور حسین ہے۔ اور اگر ہم پر غالب آنے والے فاتحین کا خوف نہ ہوتا (کہ وہ مجھ پر الزام لگائیں گے یا فاطمہ کی قبر کھودیں گے) تو میں آپ کی قبر کے پاس رہنا اپنے لیے ضروری بنا دیتا اور میں اس کے پاس ہی اعتکاف کرتا۔ اور اس عظیم آفت پر میں ایک ماں کی طرح رو رہا ہوں جس نے ایک بچہ کھو دیا ہے۔  خدا کی بارگاہ میں آپ کی بیٹی کو خفیہ طور پر خاک کے سپرد کر دیا گیا ہے اور اس کا حق زبردستی چھین لیا گیا ہے اور اسے کھلم کھلا وراثت سے محروم کر دیا گیا ہے۔ تو اے خدا کے رسول میں خدا کی حمد کرتا ہوں۔ اور بہترین صبر آپ کے ماتم پر صبر ہے، اور آپ پر اور ان (فاطمہ) پر خدا کی رحمتیں، رحمتیں اور برکتیں ہوں۔

مفید، محمد بن محمد، الأمالی (للمفید) / ص: 320، ترجمه استاد ولى - مشهد، چاپ: اول، 1364ش.

مذکورہ بالا روایت کا ہر ایک حصہ حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کے مصائب کی تلخ حقیقت کو بیان کرتا ہے۔  اس کی چند صورتیں ذکر کی جاتی ہیں:

پہلا نکتہ: صدیقہ طاہرہ سلام اللہ علیہا کی وصیت، معاملے کو چھپانے، قبر کی پردہ پوشی، اور خفیہ تدفین کے بارے میں یہ ظاہر کرتی ہے کہ ان کا حاکم حکومت سے شدید اختلاف تھا، اس لیے وہ اس کے مستحق نہیں ہیں۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی اکلوتی بیٹی کے لیے  نماز پڑھیں۔

  ان  وصیت نے سقیفہ کی پروپیگنڈہ مشین کو جھوٹی خبریں اور جھوٹ پھیلانے سے قاصر کر دیا کہ حضرت زہرا سلام اللہ علیہا ان سے مطمئن تھیں اور ان میں کوئی خاص فرق نہیں تھا۔

دوسرا نکتہ: حضرت علی علیہ السلام پر حضرت زہرا کی حالت زار کی شدت اس قدر شدید تھی کہ غم کی دنیا آپ کے مبارک قلب پر حملہ آور ہوئی اور اپنی زوجہ محترمہ کو الوداع کہتے وقت آپ کی مبارک آنکھوں سے آنسو جاری ہو گئے۔  مصیبت کی شدت سے اس نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے پناہ مانگی۔

تیسرا نکتہ: اس روایت میں حضرت علی علیہ السلام نے حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا کے اختلاس کے بارے میں بات کی ہے۔

فصیح عرب لفظ " اختلاس " استعمال کرتا ہے جب:

1.     و الخَلْسُ‏: السَّلْبُ‏ و الأَخْذُ فی نُهْزَةٍ و مُخَاتَلَة

محروم کرنا اور موقع لینا  اور چالبازی کے ساتھ ہونا چاہیے۔

مرتضى زبیدى، محمد بن محمد، تاج العروس، ج‏8 ؛ ص261، بیروت، چاپ: اول، 1414 ه.ق.

2.     الخَلْسُ‏ و الاخْتِلَاسُ‏: أخذ الشی‏ء مکابرة، تقول: اخْتَلَسْتُهُ‏ اخْتِلَاساً و اجتذابا

زبردستی کچھ لینا جب وہ کہتے ہیں کہ میں نے کوئی چیز اختلاس کی ہے تو اس کا مطلب ہے کہ میں نے اسے زبردستی لیا اور پھاڑ دیا!

فراهیدى، خلیل بن احمد، کتاب العین، ج‏4 ؛ ص197، قم، چاپ: دوم، 1409 ه.ق.

فیه‏ «أنه نهى عن‏ الْخَلِیسَةِ» و هى ما یستخلص من السّبع فیموت قبل أن یذکّى، من‏ خَلَسْتُ‏ الشى‏ء و اخْتَلَسْتُهُ‏ إذا سلبته، و هى فعیلة بمعنى مفعولة.

روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے خلیسہ اور خلیسہ کھانے سے منع فرمایا ہے اس کے لیے بھیڑیوں جیسے شکاری جانوروں کے ہاتھ سے بچنا ہے اور اس کی وجہ سے مذہبی ذبح سے پہلےمرجاتا ہے۔ خلیسہ خلس کی ریشه سے ہے، اگر کوئی چیز نکالی تو چھین لی! اس فعلیہ کا مطلب مفعوله ہے۔

ابن اثیر، مبارک بن محمد، النهایة فی غریب الحدیث و الأثر، ج‏2 ؛ ص61، قم، چاپ: چهارم، 1367 ه.ش.

«وَ اخْتُلِسَتِ‏ الزَّهْرَاء » اس کا مطلب ہے: بھیڑیوں نے چالاکی اور طاقت سے زہرا سلام اللہ علیہا کے جسم مبارک کو اتنا نقصان پہنچایا کہ ان کی زندگی کا کوئی امکان اور امید باقی نہ رہی۔

چوتھا نکتہ: مذکورہ روایت کے مطابق مدینہ منورہ میں موجود صحابہ کی اکثریت نے ایک دوسرے کے ساتھ اتحاد کیا اور حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا کے حقوق کو ہضم کرنے کی کوشش کی!  ہضم کا مطلب ہے کسی کو اس کے لائق مقام سے توڑنا اور نیچے کرنا۔

4/3۔ المزار کی رسومات کے بارے میں شیخ مفید کا نقطہ نظر

شیخ مفید کی سب سے اہم داستانی کتاب مناسک المزار ہے۔  شیخ مفید نے یہ کتاب اس مقصد سے لکھی ہے کہ ائمہ معصومین علیہم السلام کی دعاؤں اور زیارتوں کا خلاصہ جمع کیا جائے تاکہ ان کے پیروکاروں کو ایک مربوط اور منظم مجموعہ کا سامنا ہو اور وہ اسے عملی طور پر آسانی سے استعمال کر سکیں۔  اس سے معلوم ہوتا ہے کہ اس کتاب میں موجود تمام دعائیں ایک صحیح اور قابل قبول دلیل ہیں اور سب سے بڑھ کر شیخ کے فتوی کی وجہ مفید ہے اور اگر ایسا نہ ہوتا وہ اسے اپنے پیروکاروں کے لیے تجویز نہ کرتے ۔

اس قیمتی کتاب کے زیارت خطوط کے ایک پیراگراف میں یہ تصریح کی گئی ہے کہ صدیق طاہرہ شہیدہ تھیں۔

«أَیَّتُهَا الْبَتُولُ الشَّهِیدَةُ الطَّاهِرَةُ لَعَنَ اللَّهُ مَانِعَکِ إِرْثَک‏»

اے بتول طاہرہ شہیدہ، خدا کی لعنت ہو اس پر جس نے تجھے میراث سے روکا!

نام کتاب: کتاب المزار- مناسک المزار( للمفید)؛ نویسنده: مفید، محمد بن محمد (تاریخ وفات مؤلف: 413 ق‏)، محقق / مصحح: ابطحى، محمد باقر، ناشر: کنگره جهانى هزاره شیخ مفید- رحمة الله علیه‏، قم‏: 1413 ق، ص179

4/4۔ شیخ مفید کا قول " الاختصاص " میں

شیخ مفید سے منسوب سب سے اہم تاریخی کتابوں میں سے ایک الاختصاص ہے۔ اس کتاب کی خصوصیت ائمہ معصومین علیہم السلام سے متعلق واقعات اور تاریخی حقائق کا علمی  مجموعہ ہے۔ اس کتاب میں شیخ مفید نے اہل بیت علیہم السلام کے دشمنوں کے مصائب اور حملوں کا بھی ذکر کیا ہے:

«فَدَعَا بِکِتَابٍ فَکَتَبَهُ لَهَا بِرَدِّ فَدَکَ... فَخَرَجَتْ وَ الْکِتَابُ مَعَهَا فَلَقِیَهَا عُمَرُ فَقَالَ یَا بِنْتَ مُحَمَّدٍ مَا هَذَا الْکِتَابُ الَّذِی مَعَکَ فَقَالَتْ کِتَابٌ کَتَبَ لِی أَبُو بَکْرٍ بِرَدِّ فَدَکَ فَقَالَ هَلُمِّیهِ إِلَیَّ فَأَبَتْ أَنْ تَدْفَعَهُ إِلَیْهِ فَرَفَسَهَا بِرِجْلِهِ وَ کَانَتْ حَامِلَةً بِابْنٍ اسْمُهُ الْمُحَسِّنُ فَأَسْقَطَتِ الْمُحَسِّنَ مِنْ بَطْنِهَا ثُمَّ لَطَمَهَا فَکَأَنِّی أَنْظُرُ إِلَى قُرْطٍ فِی أُذُنِهَا حِینَ نُقِفَتْ‌ ثُمَّ أَخَذَ الْکِتَابَ فَخَرَقَهُ فَمَضَتْ وَ مَکَثَتْ خَمْسَةً وَ سَبْعِینَ یَوْماً مَرِیضَةً مِمَّا ضَرَبَهَا عُمَرُ ثُمَّ قُبِضَتْ»

ابوبکر نے فدک کے رد میں حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کے لیے خط لکھا، زہرا سلام اللہ علیہا خط کو لے ہوئے باہر آئیں۔ راستے میں  عمرملا ۔ اس نے کہا: محمد کی بیٹی! یہ آپ کے ہاتھ میں کیا تحریر ہے؟  انہو نے کہا: یہ وہ تحریر ہے جو ابوبکر نے فدک کےرد میں میرے لیے لکھی تھی۔ عمر نے کہا: مجھے دے دو۔ زہرا سلام اللہ علیہا نے اسے تحریر دینے سے انکار کر دیا۔ عمر نے زہرا (علیہ السلام) کو لات مارا جب کے محسن نامی بیٹا  حمل  میں تھا۔ اس ضرب کے نتیجے میں زہرا (علیہ السلام) کو اسقاط حمل ہوا۔ پھر عمر نے اسے تھپڑ مارا۔ ایسا لگتا ہے جیسے میں اب اس کے کان کی گوشواره‏ کو دیکھ رہا ہوں، جو تھپڑکی وجہ سے ٹوٹ گیا۔ پھر وہ تحریر لے کر پھاڑ  ڈالا۔    حضرت زہرا سلام اللہ علیہا گھر تشریف لے گئیں اور عمر کی ضربت کے نتیجے میں پچھتر دن تک بیمار رہیں یہاں تک کہ ان کا انتقال ہو گیا۔

مفید، محمد بن محمد، الإختصاص، ص185، 1جلد، دار المفید - قم (ایران)، چاپ: 1، 1413 ه.ق.

جیسا کہ مندرجہ بالا رپورٹ کے  سند کی بنیاد پر واضح ہے کہ حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کو دشمنوں کے متعدد حملوں کا نشانہ بنایا گیا ہے اور انہیں شدید جسمانی چوٹیں پہنچائی گئی ہیں جس سے ہر آزاد  انسان کے دل کو تکلیف پہنچتی ہے۔ ضربت اتنا شدید تھا کہ اسقاط حمل کا باعث بنا۔  سوگوار خاتون کو حملہ آوروں نے شدید زدوکوب کیا۔

4. حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت کے بارے میں شیخ مفید کے اجتہاد کی بنیاد پر عمل کرنا

شیخ مفید کے طریقہ کار کو جان کر حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت اور ان سے متعلق واقعات کے بارے میں اب ہم ان کے اجتہاد کا تجزیہ کریں گے۔ وضاحت یہ ہے کہ متعدد شواہد کی بنا پر یہ کہا جا سکتا ہے کہ شیخ مفید صدیقہ طاہرہ کی شہادت پر قطعی عقیدہ رکھتے تھے۔ اس زمرے کو ثابت کرنے کے لیے ہم ان میں سے چند شواہد کا ذکر کرتے ہیں:

4/1۔ امامیہ کے ذریعے روایت استفاضه:

جیسا کہ اس مضمون کے شروع میں ذکر کیا گیا ہے، روایت کا صحیح ہونا اس کی صداقت کے اہم ترین ثبوتوں میں سے ایک ہے۔  حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت کے بارے میں شیخ مفید کے شاگرد شیخ طوسی اپنی کتاب تلخیص الشافی میں لکھتے ہیں:

«وروایه الشیعه مستفیضه به، لا یختلفون فی ذلک»

شیعہ روایت کو بھی اسی تناظر میں قبول کیا جاتا ہے اور کسی شیعہ نے اس میں اختلاف نہیں کیا۔

الطوسی، أبو جعفر محمد بن الحسن (المتوفی 460 ق)، تلخیص الشافی‏، ج3 ص156، لملاحظات: مقدمه و تحقیق از حسین بحر العلوم، دار النشر: انتشارات المحبین - قم، الطبعة: اول‏، سنة الطبع: 1382ش.

اس بنا پر شیخ مفید کی بنیاد کے مطابق حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت سے متعلق جو روایتیں ہیں وہ صدورکے لحاظ سے قطعی اور اصولی ہیں۔

4/2۔ علامہ مجلسی کی نظر میں شہادت کے اوپر متعدد دلیلیں

روایت کے صدور کو ثابت کرنے والا ایک اہم ترین عقلی ثبوت اس کے طریقوں کی تعدد ہے۔  تواتر یقیناً ہر مجتہد اور فقیہ کے لیے مفید ہے۔  حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت سے متعلق روایات کے استفہام کو ثابت کرنے کے علاوہ  علامہ محمد تقی مجلسی نے اس معاملے میں تعدد کے وجود کا دعویٰ کیا ہے:

 اور جہاں تک شیعوں میں "شہیدہ" کا تعلق ہے تو یہ ائمہ اہل بیت علیہم السلام سے بصورت تواتر وارد ہوا ہے۔ عمر نےقنفذ کی مدد سے اپ کے پیٹ پر مارا۔  اور وہ بچہ جسے حضرت المرسلین رحمتہ اللہ علیہ نے محسن کہا تھا، اسقاط حمل ہو گیا اور وہ زہرا بیمار ہو گیی۔

لوامع صاحبقرانى ( شرح الفقیه ) ( فارسی ) - محمد تقی المجلسی ( الأول ) - ج 8 ص 507

نیز ان کے بیٹے علامہ محمد باقر مجلسی،  صاحب بہار الانوار کہتے ہیں:

«ثم إن هذا الخبر یدل علی أن فاطمة صلوات الله علیها کانت شهیدة و هو من المتواترات»

یہ خبر اس بات پر دلالت کرتی ہے کہ حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا شہید ہو چکی ہیں اور یہ بات متواترہ میں سے ہیں۔

مرآة العقول فی شرح أخبار آل الرسول، نویسنده: مجلسی، محمد باقر بن محمد تقی، محقق / مصحح: رسولی محلاتی، سید هاشم، ج 5، ص 318، ح 2

روایات کے صدور کی تصدیق میں شیخ مفید کی بنیاد کے مطابق - جو اس مضمون کے شروع میں بیان کیا گیا ہے - اگر ایک صورت میں متواتر روایتیں ہوں،  ایک فقیہ کے لیے اس کے مواد پر ایمان لانے کے لیے دلیل اور حجت مکمل ہے اور وہ اس کی بنیاد پر فتویٰ دے سکتا ہے اور اس پر ایمان لا سکتا ہے۔  حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت کا مسئلہ اہل بیت علیہم السلام سے متواتر روایات کے موجود ہونے کی وجہ سے ان واقعات میں سے ایک ہے کہ شیخ مفید کے اجتہاد طریقہ میں حادثے کے بارے میں یقین کرنا مفید ہے۔ 24

4/2۔ یہ روایت اہل سنت میں بھی مشہور ہے۔

روایت کو معتبر بنانے میں سب سے واضح مسئلہ یہ ہے کہ یہ روایت اس قدر مشہور ہے کہ دوستوں، مخالفین اور دشمنوں نے بھی روایت کی ہے۔ اس بنا پر اگر واقعہ - وہ بھی انتہائی سیاسی اہمیت کا حامل - شیعوں کے حق میں ہے اور ان کی فکری بنیادوں اورقطعیات تاریخی سے مطابقت رکھتا ہے تو اگر اسے اہل سنت کی کتابوں میں نقل کیا جائے تو اس کو ثابت کرنے  کیلے کسی دلیل کی ضرورت نہیں ہے۔ کیونکہ یہ اقتباس اس واقعہ کی عظیم شہرت کو ظاہر کرتا ہے، جسے سنسرشپ اور شدید تصادم کے باوجود دوسرا فریق بھی جھٹلا نہیں سکتا ۔ صدیقہ طاہرہ کے گھر کو آگ لگانے کی دھمکی کی کہانی  اور خلیفہ اول سے ان کے شدید اختلافات بھی اہلسنت کے نزدیک  مشہور ہیں۔  شیخ مفید کے شاگرد شیخ طوسی اس بارے میں لکھتے ہیں:

ومما أنکر علیه: ضربهم لفاطمه علیها السلام وقد روی: أنهم ضربوها بالسیاط والمشهور الذی لا خلاف فیه بین الشیعه: أن عمر ضرب على بطنها حتى أسقطت فسمی السقط محسنا. والروایه بذلک مشهوره عندهم. وما أرادوا من إحراق البیت علیها حین التجأ إلیها قوم وامتنعوا من بیعته. ولیس لأحد أن ینکر الروایه بذلک، لأنا قد بینا الروایه الوارده من جهه العامه من طریق البلاذری وغیره

ابوبکر کے اس عمل سے جنہیں وہ ناجائز سمجھتے تھے۔ انہوں نے فاطمہ سلام اللہ علیہا کو مارا۔  روایت ہے کہ: انہوں نے فاطمہ کو کوڑے سے مارا۔

  اور ایک مشہور روایت میں، جس سے شیعہ اختلاف نہیں کرتے، یہ بیان کیا گیا ہے کہ: عمر نے فاطمہ سلام اللہ علیہا کے پیٹ پر مارا، جس کے نتیجے میں ان کا جنین ساقط ہوگیا۔  اور اس جنین کا نام محسن رکھا گیا تھا۔ اس واقعہ کی روایت شیعوں میں مشہور ہے۔  اور ابوبکر کا ایک عمل جسے وہ ناجائز سمجھتے تھے وہ یہ ہے کہ: جب ایک گروہ نے فاطمہ کے گھر میں پناہ لی اور بیعت کرنے سے انکار کیا تو انہوں نے فاطمہ کے گھر کو آگ لگانے کا منصوبہ بنایا۔ اس واقعہ کی روایات سے کوئی انکار نہیں کر سکتا۔ کیونکہ ہم نے اس کی احادیث  کوبلاذری وغیرہ سے روایت کی ہیں۔

  الطوسی، أبو جعفر محمد بن الحسن (المتوفی 460 ق)، تلخیص الشافی‏، ج3 ص156، لملاحظات: مقدمه و تحقیق از حسین بحر العلوم، دار النشر: انتشارات المحبین - قم، الطبعة: اول‏، سنة الطبع: 1382ش.

نیز «مرحوم بیاضی نباطی» متوفای 877 هجری در کتاب «الصراط المستقیم» جلد سوم صفحه 12 می‌نویسد:

«و اشتهر فی الشیعة أنه حصر فاطمة فی الباب حتی أسقطت محسنا»

شیعوں میں مشہور ہے کہ کچھ لوگوں نے حضرت فاطمہ زہرا کے گھر  میں حملہ کرکے بے حرمتی کی اور حضرت محسن کو شہید کر دیا ۔

الصراط المستقیم إلی مستحقی التقدیم، نویسنده: عاملی نباطی، علی من محمد بن علی بن محمد بن یونس، محقق / مصحح: رمضان، میخائیل، ج 3، ص 12، باب و منها ما رواه البلاذری و اشتهر فی الشیعة أنه حصر فاطمة فی الباب

شیخ مفید کے اجتہاد کی بنیاد کو مدنظر رکھتے ہوئے - جس کا اس مضمون میں پہلے ذکر کیا گیا ہے - ان کے خیال میں جلانے کی دھمکیوں کا مسئلہ ایک قطعی اور جزمی معاملہ تھا۔ اس طرح سےکہ دشمن بھی اس کا اعتراف اور اظہار کرنے پر مجبور ہو گئے ہیں۔

4/3۔ مشہور کتابوں اور اصول روایت میں مضمون حدیث کا اخراج اور حوالہ

ایک اہم ترین ثبوت جو روایت کے اجراء کو یقینی بنا سکتا ہے۔ تخریج ایک حدیث ہے یا مشہور روایت کی کتابوں اور اصولوں میں ایک عام موضوع ہے۔  تحقیق کے بعد حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت کا ذکر بہت سی روایتی کتابوں بالخصوص  کتب اربعہ اور شیعہ حدیث کے مستند اصولوں میں آیا ہے، مثال کے طور پر درج ذیل کو ذکر کیا جا سکتا ہے:

4/3/1۔ سالم بن قیس ہلالی کی کتاب

سلیم بن قیس ہلالی کی کتاب سب سے قدیم اور مشہور شیعہ روایت کی کتابوں میں سے ایک ہے۔  کلینی مرحوم نے کافی میں کئی جگہوں پر سلیم بن قیس ہلالی سے روایت نقل کی ہے۔  اس کتاب میں سیدہ فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا کے گھر پر حملہ اور صدیقہ طاہرہ کا  پسلیاں ٹوٹنے اور اسقاط حمل وغیرہ کی واقعہ واضح طور پر پیش کی گئی ہے۔

«وَ قَدْ کَانَ قُنْفُذٌ لَعَنَهُ اللَّهُ ضَرَبَ فَاطِمَةَ علیها السلام بِالسَّوْطِ حِینَ حَالَتْ بَیْنَهُ وَ بَیْنَ زَوْجِهَا وَ أَرْسَلَ إِلَیْهِ عُمَرُ إِنْ حَالَتْ بَیْنَکَ وَ بَیْنَهُ فَاطِمَةُ فَاضْرِبْهَا فَأَلْجَأَهَا قُنْفُذٌ لَعَنَهُ اللَّهُ إِلَى عِضَادَةِ بَابِ بَیْتِهَا وَ دَفَعَهَا فَکَسَرَ ضِلْعَهَا مِنْ جَنْبِهَا فَأَلْقَتْ جَنِیناً مِنْ بَطْنِهَا فَلَمْ تَزَلْ صَاحِبَةَ فِرَاشٍ حَتَّى مَاتَتْ صَلَّى اللَّهُ عَلَیْهَا مِنْ ذَلِکَ شَهِیدَة»

قنفذ - خدا اس پر لعنت کرے - فاطمہ سلام اللہ علیہا کو کوڑے مارے جب اس نے اپنے آپ کو اس کے اور اپنے شوہر کے درمیان رکھا۔  اور عمر نے پیغام بھیجا کہ اگر فاطمہ تمہارے اور علی کے درمیان  آجائے تو اسے مارو۔  قنفذ اسے گھسیٹ کر گھر کے دروازے کی چوکھٹ کی طرف لے گیا اور دروازے کو دھکیل دیا جسکی وجہ سےاس کے پہلو کی ایک ہڈی ٹوٹ گئی اور جنین  سقط حمل ہو گیا  اوراسی زخم کی بنا پر شہید ہونے تک بستر پر ہی لیٹی رہی۔

هلالى، سلیم بن قیس، کتاب سلیم بن قیس الهلالی، ج‏2 ؛ ص588، ایران ؛ قم، چاپ: اول، 1405ق.

4/3/2۔ علی بن جعفر کے مسائل کی کتاب:

علی بن جعفر کے مسائل کی حدیث کی کتاب چار سو شیعوں کے اہم ترین اصولوں میں سے ایک ہے۔ علی بن جعفر امام صادق علیہ السلام کی اولاد میں سے ہیں۔  انہوں نے اپنے آباء سے بہت سی روایات نقل کی ہیں۔ اس روایت کی کتاب میں یہ واضح کیا گیا ہے کہ فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا ایک صدیقه اور شہیدہ تھیں۔

«811- مُحَمَّدُ بْنُ یَحْیَى عَنِ الْعَمْرَکِیِّ بْنِ عَلِیٍّ عَنْ عَلِیِّ بْنِ جَعْفَرٍ عَنْ أَخِیهِ أَبِی الْحَسَنِ ع قَالَ: إِنَّ فَاطِمَةَ ع صِدِّیقَةٌ شَهِیدَةٌ »

عریضى، على بن جعفر، مسائل علیّ بن جعفر و مستدرکاتها، ص325، قم، چاپ: اول، 1409 ق.

4/3/3. کتاب اصول کافی تالیف کلینی:

بلاشبہ یہ کہا جا سکتا ہے کہ کتاب اصول کافی شیعوں کی سب سے قیمتی کتاب ہے۔ مرحوم کلینی نے بڑی محنت اور بڑی دقت نظر کے ساتھ اپنی  اس عظیم کتاب کو شیعہ روایت کی مشہور کتابوں اور اصولوں سے اس دور میں مرتب کیا جس  زمانےمیں معصومین علیہم السلام کاحضور قریب تھے۔    قابل غور بات یہ ہے کہ شیعہ فقہاء اور علماء کے درمیان اس کتاب میں روایت کا ذکر کرنا اس کے اجراء میں اعتماد کی اہم ترین نشانیوں میں سے ہے۔ اس کام میں مرحوم کلینی نے ان روایات کا تذکرہ کیا ہے جن میں حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی صدیقہ اور شہدہ ہونے کا واضح طور پر ذکر کیا گیا ہے۔  اس کتاب میں انہوں نے درج ذیل باتیں شامل کی ہیں:

« مُحَمَّدُ بْنُ یَحْیَى عَنِ الْعَمْرَکِیِّ بْنِ عَلِیٍّ عَنْ عَلِیِّ بْنِ جَعْفَرٍ عَنْ أَخِیهِ أَبِی الْحَسَنِ ع قَالَ: إِنَّ فَاطِمَةَ ع صِدِّیقَةٌ شَهِیدَةٌ »

کلینى، محمد بن یعقوب، الکافی (ط - الإسلامیة)، ج‏1 ؛ ص458، تهران، چاپ: چهارم، 1407 ق.

مذکورہ بالا  روایت کے علاوہ مرحوم کلینی امام حسین علیہ السلام کی ایک اور روایت میں فرماتے ہیں:

أَحْمَدُ بْنُ مِهْرَانَ رَحِمَهُ اللَّهُ رَفَعَهُ وَ أَحْمَدُ بْنُ إِدْرِیسَ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ عَبْدِ الْجَبَّارِ الشَّیْبَانِیِّ قَالَ حَدَّثَنِی الْقَاسِمُ بْنُ مُحَمَّدٍ الرَّازِیُّ قَالَ حَدَّثَنَا عَلِیُّ بْنُ مُحَمَّدٍ الْهُرْمُزَانِیُ‏ عَنْ أَبِی عَبْدِ اللَّهِ الْحُسَیْنِ بْنِ عَلِیٍّ ع قَالَ: لَمَّا قُبِضَتْ فَاطِمَةُ ع دَفَنَهَا أَمِیرُ الْمُؤْمِنِینَ سِرّاً وَ عَفَا عَلَى مَوْضِعِ قَبْرِهَا ثُمَّ قَامَ فَحَوَّلَ وَجْهَهُ إِلَى قَبْرِ رَسُولِ اللَّهِ ص فَقَالَ السَّلَامُ عَلَیْکَ یَا رَسُولَ اللَّهِ عَنِّی وَ السَّلَامُ عَلَیْکَ عَنِ ابْنَتِکَ وَ زَائِرَتِکَ وَ الْبَائِتَةِ فِی الثَّرَى بِبُقْعَتِکَ وَ الْمُخْتَارِ اللَّهُ لَهَا سُرْعَةَ اللَّحَاقِ بِکَ قَلَّ یَا رَسُولَ اللَّهِ عَنْ صَفِیَّتِکَ صَبْرِی وَ عَفَا عَنْ سَیِّدَةِ نِسَاءِ الْعَالَمِینَ تَجَلُّدِی إِلَّا أَنَّ لِی فِی التَّأَسِّی بِسُنَّتِکَ فِی فُرْقَتِکَ مَوْضِعَ تَعَزٍّ فَلَقَدْ وَسَّدْتُکَ فِی مَلْحُودَةِ قَبْرِکَ وَ فَاضَتْ نَفْسُکَ بَیْنَ نَحْرِی وَ صَدْرِی بَلَى وَ فِی کِتَابِ اللَّهِ لِی أَنْعَمُ الْقَبُولِ- إِنَّا لِلَّهِ وَ إِنَّا إِلَیْهِ راجِعُونَ‏ قَدِ اسْتُرْجِعَتِ الْوَدِیعَةُ وَ أُخِذَتِ الرَّهِینَةُ وَ أُخْلِسَتِ الزَّهْرَاءُ فَمَا أَقْبَحَ الْخَضْرَاءَ وَ الْغَبْرَاءَ یَا رَسُولَ اللَّهِ أَمَّا حُزْنِی فَسَرْمَدٌ وَ أَمَّا لَیْلِی فَمُسَهَّدٌ وَ هَمٌّ لَا یَبْرَحُ مِنْ قَلْبِی أَوْ یَخْتَارَ اللَّهُ لِی دَارَکَ الَّتِی أَنْتَ فِیهَا مُقِیمٌ کَمَدٌ مُقَیِّحٌ وَ هَمٌّ مُهَیِّجٌ‏ سَرْعَانَ مَا فَرَّقَ بَیْنَنَا وَ إِلَى اللَّهِ أَشْکُو وَ سَتُنْبِئُکَ‏ ابْنَتُکَ‏ بِتَظَافُرِ أُمَّتِکَ عَلَى هَضْمِهَا فَأَحْفِهَا السُّؤَالَ‏وَ اسْتَخْبِرْهَا الْحَالَ فَکَمْ مِنْ غَلِیلٍ مُعْتَلِجٍ بِصَدْرِهَا لَمْ تَجِدْ إِلَى بَثِّهِ سَبِیلًا وَ سَتَقُولُ وَ یَحْکُمُ اللَّهُ‏ وَ هُوَ خَیْرُ الْحاکِمِینَ* سَلَامَ مُوَدِّعٍ لَا قَالٍ وَ لَا سَئِمٍ فَإِنْ أَنْصَرِفْ فَلَا عَنْ مَلَالَةٍ وَ إِنْ أُقِمْ فَلَا عَنْ سُوءِ ظَنٍّ بِمَا وَعَدَ اللَّهُ الصَّابِرِینَ وَاهَ وَاهاً وَ الصَّبْرُ أَیْمَنُ وَ أَجْمَلُ وَ لَوْ لَا غَلَبَةُ الْمُسْتَوْلِینَ لَجَعَلْتُ الْمُقَامَ وَ اللَّبْثَ لِزَاماً مَعْکُوفاً وَ لَأَعْوَلْتُ إِعْوَالَ الثَّکْلَى عَلَى جَلِیلِ الرَّزِیَّةِ فَبِعَیْنِ اللَّهِ تُدْفَنُ ابْنَتُکَ سِرّاً وَ تُهْضَمُ حَقَّهَا وَ تُمْنَعُ إِرْثَهَا وَ لَمْ یَتَبَاعَدِ الْعَهْدُ وَ لَمْ یَخْلَقْ مِنْکَ الذِّکْرُ وَ إِلَى اللَّهِ یَا رَسُولَ اللَّهِ الْمُشْتَکَى وَ فِیکَ یَا رَسُولَ اللَّهِ أَحْسَنُ الْعَزَاءِ صَلَّى اللَّهُ عَلَیْکَ وَ عَلَیْهَا السَّلَامُ وَ الرِّضْوَانُ.

کلینى، محمد بن یعقوب، الکافی (ط - الإسلامیة)، ج‏1 ؛ ص458، تهران، چاپ: چهارم، 1407 ق.

حسین بن علی علیہ السلام نے کہا: جب فاطمہ سلام اللہ علیہا کا انتقال ہوا تو امیر المومنین علیہ السلام نے انہیں خفیہ  طور پردفن کر دیا اور قبر کی نشانی مٹادی ۔  پھر وہ اٹھے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی قبر کی طرف متوجہ ہوئے اور فرمایا: سلام ہو آپ پر میری طرف سے اور آپ کی بیٹی کی طرف سے اور آپ کے مہمانوں کی طرف سے اور وہ جو زمین پر گیا اور مجھ سے جدا ہوا اور آپ کی قبر پر آیا اور خدا نے اسے آپ کے پاس جلد آنے کے لیے چن لیا ہے۔ . یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم! تیرے محبوب کی جدائی سے ہمارا صبر کم ہو گیا ہے اور ہم دنیا کی عورتوں کے ہاتھوں تباہ ہو گئے ہیں، سوائے اس کے کہ تیری اس روایت پر عمل کرنے میں سکون کی گنجائش باقی ہے جو میں نے تیری جدائی میں کی تھی۔  کیونکہ میں نے آپ کا سر آپ کی قبر میں رکھا تھا اور آپ کی روح میرے حلق اور سینے کے درمیان سے نکلی تھی (یعنی جب اپ کا جان قبض ہورہا تھا اس وقت آپ کا سر میرے سینے سے چپکا ہوا تھا) ہاں کتاب خدا میں بہترین قبولیت ( اور اس آفت پر صبر میرے لیے ہے)، إِنَّا لِلَّهِ وَ إِنَّا إِلَیْهِ راجِعُونَ‏،   بے شک امانت واپس لے لی گئی اور یرغمال بنا لی گئی اور زہرا کو میرے ہاتھ سے اغوا کر لیا گیا۔

اے خدا کے رسول یہ نیلا آسمان اور اندھیری زمین مجھے کتنی بدصورت لگتی ہے۔ میری اداسی ابدی رہے اور میری رات بے خوابی میں گزرے، اور میرا غم ہمیشہ میرے دل میں رہے، تاکہ خدا میرے لیے وہ گھر چن لے جہاں تم قیام پذیر ہو۔

  (میں مرنا چاہتا ہوں اور آپ کے ساتھ شامل ہونا چاہتا ہوں) مجھے ایک اداسی ہے جس سے میرا دل خون کر رہا ہے اور مجھے ایک دلچسپ اداسی ہے کہ کتنی جلدی ہمارے درمیان جدائی ہو گئی، میں صرف اللہ سے شکایت کرتا ہوں۔

جلد ہی، آپ کی بیٹی آپ کو آپ کی قوم کے ہاضمے میں ملوث ہونے اور شدید اذیتوں اور اپنے حقوق کی پامالی کے بارے میں اطلاع دے گی۔ اس سے اپنی پوری کہانی کے بارے میں پوچھیں اور اس سے رپورٹ طلب کریں کیونکہ شاید اس کے دل کا درد تھا جو اس کے سینے میں آگ کی طرح جل رہا تھا اور اسے دنیا میں بتانے یا سمجھانے کا کوئی راستہ نہیں مل رہا تھا۔ لیکن اب وہ کہتا ہے اور خدا فیصلہ کرتا ہے اور وہ بہترین فیصلہ کرنے والا ہے۔

    سلام ہو آپ پر جو نہ غضبناک ہو اور نہ غمگین، کیونکہ اگر میں یہاں سے واپس آیا تو یہ میرے غم کی وجہ سے نہیں ہو گا اور اگر میں رہوں گا تو اس میں شک نہیں ہو گا جس کا خدا نے صبر کے ذریعہ وعدہ کیا ہے۔ .

پھربھی صبر زیادہ بابرکت اور مشہور ہے۔ اگر دبنگ دشمنوں کی موجودگی نہ ہوتی (جو مجھ پر الزام لگاتے ہیں یا ڈھونڈتے  ہیں کہ فاطمہ کی قبرکہاہے تاکہ نبش قبر کرے) تو میں یہاں اپنا قیام  کرتا اور میں مردہ بچے والی عورت کی طرح اس عظیم آفت کا انتظار کر تھا۔ خدا کی نظر میں آپ کی بیٹی کو خفیہ طور پر خاک کے سپرد کیا گیا اور اس کا حق پامال کیا گیا اور اس کو وراثت سے روکا گیا۔    اگرچہ زیادہ عرصہ نہ گزرا اور تیری یاد پرانی نہ ہوئی اے خدا کے رسول! میری شکایت صرف خدا سے ہے اور بہترین تسلی آپ کی طرف سے ہے یا رسول اللہ!  (کیونکہ میں نے آپ کی وفات پر صبر کیا یا آپ نے صبر کے بارے میں جو کچھ کہا اس پر عمل کیا) آپ پر خدا کی سلامتی اور برکتیں ہوں اور فاطمہ پر سلام ہو۔

کلینى، محمد بن یعقوب، أصول الکافی، ج‏2، ص: 358 ، ترجمه مصطفوى - تهران، چاپ: اول، 1369 ش.

مذکور ہ  مستند کے مطابق یہ صدیقہ طاہرہ سلام اللہ علیہا کے دشمنوں اور حملہ آوروں کے "ہضم" کے بارے میں ہے۔

  لغت کے ماہرین کا حوالہ دیتے ہو، ہضم کے مندرجہ ذیل  معنی بیان کئےہیں:

هضم‏ الهاء و الضاد و المیم: أَصلٌ صحیح یدلُّ على کَسرٍ و ضَغطٍ و تداخُل و هضَمت‏ الشّى‏ءَ هضماً: کسرتُه‏

ہضم ہا اور ضاد  اور میم کے مادہ سے ہوتا ہے۔ در اصل اس سے مراد بہت زور سے توڑنا اور دبانا اور کسی چیز کو ملانا ہے۔  اور کسی چیز کو ہضم کرنے کا مطلب ہے اسے توڑ دینا۔

ابن فارس، أحمد بن فارس، معجم مقاییس اللغة، ج‏6، ص: 55، قم، چاپ: اول، 1404ق.

هضَم‏ الشی‏ءَ الرِّخوَ: شدَخه و کسره. و سقطت الثمرة من الشجرة فانهضمت

کسی چیز کو ہضم کرنے کا مطلب ہے "شدخ" یا خشک اور ٹھوس چیز کو توڑنا۔  جب پھل درخت کے اوپر سے گر کر ریزہ ریزہ ہو جائے تو اسے ہضم کہتے ہیں۔

زمخشرى، محمود بن عمر، أساس البلاغة، ص: 703، بیروت، چاپ: اول، 1979م.

خلیل بن احمد فراہیدی نے شدخ کی تعریف اس طرح کی ہے:

الشَّدْخُ‏: کسر الشی‏ء الأجوف کالرأس و نحوه‏

شدخ کا مطلب ہے انسانی سر کی طرح خشک اور ٹھوس چیز کو توڑنا۔

فراهیدى، خلیل بن أحمد، کتاب العین، ج4، ص: 166، قم، چاپ: دوم، 1409ق.

مندرجہ بالا معانی میں دقت حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کے مصائب کی گہرائی اور اس خاتون کے زخموں کی شدت کو ظاہر کرتی ہے۔  کیونکہ صدیقہ طاہرہ سلام اللہ علیہا کو دشمنوں کے ہاتھوں ہضم کرنے کا مطلب ہڈیوں کا ٹوٹ جانا اور شدید جسمانی اور ذہنی دباؤ اور ان کا ٹوٹ جانا ہے۔

4/3/4۔ مرحوم نعمانی الغیبہ میں  فرماتے ہیں:

"مرحوم نعمانی" کا انتقال 360 ہجری میں ہوا اور وہ ممتاز شیعہ علماء میں سے ہیں اور مرحوم کلینی کے عظیم شاگردوں میں سے ہیں۔  انہوں نے اپنی کتاب "الغیبہ" میں حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا کو پیش آنے والے مصائب کا ذکر اور  روایت کیا ہے۔

«مضت غضبی علی أمة أبیها و دعاها ما فعل بها إلی الوصیة بأن لا یصلی علیها أحد منهم»

ان کا انتقال اس وقت ہوا جب وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی امت سے ناراض تھے۔  اور وصیت کی کہ ان میں سے کوئی بھی  اپ کے جسد خاکی پر نماز نہ پڑھے۔

 الغیبة للنعمانی، نویسنده: ابن أبی زینب، محمد بن ابراهیم، محقق / مصحح: غفاری، علی اکبر، ص 48، ح 2

4/3/5. تفسیر عیاشی

محمد بن مسعود عیاشی (متوفی 320 قمری) امامیہ کے علماء اور مفسرین میں سے ہیں۔ ابن ندیم ان کے مقام کے بارے میں لکھتے ہیں:

 أبو النضر محمد بن مسعود العیاشى من أهل سمرقند، و قیل انه من بنى تمیم‏ من فقهاء الشیعة الامامیة، أوحد دهره و زمانه فى غزارة العلم. و لکتبه بنواحى خراسان شأن من الشأن‏

ابو نصر محمد بن مسعود عیاشی سمرقند سے تعلق رکھنے والے ہیں۔  کہا جاتا ہے کہ وہ قبیلہ بنی تمیم سے ہے۔  ان کا شمار امامیہ شیعہ فقہاء میں ہوتا ہے۔  وہ علم کی کثرت میں منفرد تھے۔  ان کی کتابوں کو خراسان میں بہت بلند مقام حاصل ہے۔

ابن ندیم، محمد بن اسحاق، الفهرست (ابن ندیم)، ص274، 1جلد، دار المعرفة - لبنان - بیروت، چاپ: 1.

ابی المقدم کے سند کےمطابق عیاشی اپنے تفسیر میں  اپنے والد سے نقل کرتے ہیں جو کہ خود حضرت زہرا کے گھر پر حملے کے وقت موجود تھے، روایت کیاہے:

«... قال عمر: قوموا بنا إلیه، فقام أبو بکر، و عمر، و عثمان و خالد بن الولید و المغیرة بن شعبة، و أبو عبیدة بن الجراح، و سالم مولى أبی حذیفة، و قنفذ، و قمت معهم، فلما انتهینا إلى الباب- فرأتهم فاطمة ص أغلقت الباب فی وجوههم، و هی لا تشک أن لا یدخل علیها إلا بإذنها، فضرب عمر الباب برجله فکسره و کان من سعف‏  ثم دخلوا فأخرجوا علیا ع ملببا  فخرجت فاطمة علیها السلام فقالت: یا با بکر أ ترید أن ترملنی من زوجی‏  و الله لئن لم تکف عنه لأنشرن شعری - و لأشقن جیبی و لآتین قبر أبی و لأصیحن‏  إلى ربی، فأخذت بید الحسن و الحسین علیهما السلام، و خرجت ترید قبر النبی صلی الله علیه و آله فقال علی علیه السلام لسلمان: أدرک ابنة محمد صلی الله علیه و آله...»

عمر نے کہا: تم سب جمع ہو، چلو علی علیہ السلام کے پاس چلتے ہیں! ابوبکر، عمر، عثمان، خالد بن ولید، مغیرہ بن شعبہ، ابو عبیدہ جراح، سالم ابو حذیفہ کے حلیف، قنفذ اور دوسرے گھر کی طرف بڑھے۔  اور میں [ابوالقدم] بھی ان کے ساتھ تھا، جب ہم گھر پہنچے تو فاطمہ نے حملہ آوروں کو دیکھا اور گھر کا دروازہ بند کر دیا۔ انھونے کبھی نہیں سوچا تھا کہ وہ  لوگ اس کی اجازت کے بغیر گھر میں داخل ہو گا۔    اس وقت عمر نے دروازے کو لات مار کر  دروازہ  کو توڑ دیا جو کھجور کی لکڑی سے بنا تھا۔  پھر وہ زبردستی گھر میں داخل ہوئے اور حضرت علی علیہ السلام کو ہاتھ باندھ کر باہر لے گئے اور حضرت فاطمہ سلام اللہ علیہا بھی باہر نکلی۔  اور فرمایا اے ابوبکر کیا تم میرے شوہر کو قتل کرنا چاہتے ہو؟ خدا کی قسم اگر تم نے اسے جانے نہ دیا تو میں اپنا حجاب اتار کر اپنے بابا کی قبر پر جاؤں گی اور خدا کے پاس تمہارا شکایت کروں گی۔    حضرت فاطمہ سلام اللہ علیہا نے امام حسن و حسین علیہما السلام کا ہاتھ پکڑا اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی قبر پر جانے کا ارادہ کرتے ہوئے گھر سے نکلیں۔ حضرت علی نے سلمان سے فرمایا: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی بیٹی کو تلاش کرو! »

  عیاشى، محمد بن مسعود، تفسیر العیّاشی، ج‏2، ص:66 الی 68، تهران، چاپ: اول، 1380 ق

یہ واضح ہوگیا کہ؛ مذکورہ بالا روایت صدیقہ طاہرہ سلام اللہ علیہا پر حملے اور نقصان کے بارے میں ہے۔4/3/6۔ کامل الزیارات ابن قولویه:

عظیم شیعہ عالم اور محدث ابن قولویہ (متوفی 367 ​​قمری)  زیارات اہل بیت علیہم السلام کی زیارت کے موضوع پر سب سے مشہور روایتی کتابوں میں سے ایک ہے شیعہ کی نظر میں ۔ علامہ مجلسی نے حدیث کے اس اصول پر بہت زیادہ توجہ دی ہے اور اسے بحار الانوار میں اپنے معتبر ذرائع میں سے ایک کے طور پر ذکر کیا ہے۔  وہ اس کتاب کے بارے میں لکھتے ہیں:

و کتاب کامل الزیارة من‏ الأصول‏ المعروفة و أخذ منه الشیخ فی التهذیب و غیره من المحدثین.

کتاب کامل الزیارۃ علماء حدیث میں مشہور اصولوں میں سے ایک ہے جسے شیخ طوسی نے تہذیب اور دیگر محدثین  نے اس سے روایت نقل کیا ہے۔

مجلسى، محمد باقر بن محمد تقى، بحار الأنوار (ط - بیروت)، ج‏1 ؛ ص27،  بیروت، چاپ: دوم، 1403 ق.

بہت سے فقہاء اور محدثین کی نظر میں یہ کتاب ان لوگوں کے لیے توثیق کا ذریعہ ہے جن لوگوں نے اس  کتاب کو سلسلہ سند قرار دیا ہے۔  کیونکہ ابن قولویہ نے اپنی کتاب کے تعارف میں کہا ہے:

«... وإنّما دعانی إلى تصنیف کتابی هذا مسألتک وتَردادُک القول على مرّة بعد أخرى تسألنی ذلک ... فاشغلتُ الفکر فیه وصرفت الهمَّ إلیه وسألت اللَّه- تبارک وتعالى- العون علیه حتى أخرجته وجمعته عن الأئمة- صلوات اللَّه علیهم أجمعین- من أحادیثهم ولم أخرج فیه حدیثاً روى عن غیرهم إذ کان فیما رُوِّینا عنهم من حدیثهم- صلوات اللَّه علیهم- کفایة عن حدیث غیرهم، وقد علمنا إنّا لا نحیط بجمیع ما روى عنهم فی هذا المعنى ولا فی غیره، لکن ما وقع لنا من جهة الثقات من أصحابنا- رحمهم اللَّه [برحمته‏]- ولا أخرجت فیه حدیثاً روى عن الشذاذ من الرجال یؤثر [باثر] ذلک عنهم علیهم السلام المذکورین غیر المعروفین بالروایة، المشهورین بالحدیث والعلم وسمیّته کتاب کامل الزیارات...»

... جس چیز نے مجھے یہ کتاب لکھنے پر مجبور کیا وہ آپ کی مسلسل درخواست اور اصرار تھا... اس لیے میں نے اپنے خیالات کو اس پر مرکوز کیا۔  اور میں نے اس پر سخت محنت کی اور خدا سے مدد طلب کی یہاں تک کہ میں نے اسے مکمل کر لیا اور اسے ہمارے ائمہ معصومین علیہم السلام کی روایات سے بھر دیا۔ اور اس میں ائمہ کے علاوہ کسی  دوسرے کے روایت نہیں لایا۔ کیونکہ معصومین علیہم السلام کی روایتیں ہمیں دوسروں کی روایتوں سے بے نیاز کرتی ہیں۔ جب کہ ہم جانتے ہیں کہ ہم ہر اس چیز سے گھرے ہوئے نہیں ہیں جو اس کتاب اور دیگر مضامین میں معصومین علیہم السلام سے نقل ہوئی ہیں۔ تاہم، ہم اس پر بھروسہ کرتے ہیں جو ہمارے قابل اعتماد ساتھیوں سے دستیاب ہے، خدا ان پر رحمت نازل کریں۔ اور اس کتاب میں میں کوئی ایسی حدیث نہیں لایا جو چند احادیث کے ساتھ لوگوں سے روایت کی گئی ہو، اور نہ ہی معصومین کی طرف سے کوئی قول لایا ہوں۔ یعنی وہ لوگ جن کے نام تو بیان کیے گئے ہیں لیکن وہ روایت کرنے میں مشہور نہیں ہیں اور وہ حدیث اور علم کے حوالے سے مشہور نہیں ہیں۔  میں نے اس کتاب کا نام کامل الزیارات رکھا۔

 ابن قولویه، جعفر بن محمد، کامل الزیارات،؛ ص3، نجف اشرف، چاپ: اول، 1356ش.

اس  مقدمہ کی بنا پر ابن قولویہ نے اپنی کتاب میں شازی کی ایسی کوئی روایت ذکر نہیں کی جس پر مشہور لوگوں نے توجہ نہ دی ہو۔ اس نکتے پر غور کرتے ہوئے حدیث کے اس اہم کام کی روایات کا حوالہ دیتے ہوئے ہمیں درج ذیل روایت ملتی ہے:

حَدَّثَنِی مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ جَعْفَرٍ الْحِمْیَرِیُّ عَنْ أَبِیهِ عَنْ عَلِیِّ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ سَالِمٍ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ خَالِدٍ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ حَمَّادٍ الْبَصْرِیِّ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ الْأَصَمِّ عَنْ حَمَّادِ بْنِ عُثْمَانَ عَنْ أَبِی عَبْدِ اللَّهِ ع قَالَ: لَمَّا أُسْرِیَ بِالنَّبِیِّ ص إِلَى السَّمَاءِ قِیلَ لَهُ إِنَّ اللَّهَ تَبَارَکَ وَ تَعَالَى یَخْتَبِرُکَ فِی ثَلَاثٍ لِیَنْظُرَ کَیْفَ صَبْرُکَ قَالَ أُسَلِّمُ لِأَمْرِکَ یَا رَبِّ وَ لَا قُوَّةَ لِی عَلَى الصَّبْرِ إِلَّا بِکَ فَمَا هُنَّ قِیلَ لَهُ أَوَّلُهُنَّ الْجُوعُ وَ الْأَثَرَةُ عَلَى نَفْسِکَ وَ عَلَى أَهْلِکَ لِأَهْلِ الْحَاجَةِ قَالَ قَبِلْتُ یَا رَبِّ وَ رَضِیتُ وَ سَلَّمْتُ وَ مِنْکَ التَّوْفِیقُ وَ الصَّبْرُ وَ أَمَّا الثَّانِیَةُ فَالتَّکْذِیبُ وَ الْخَوْفُ الشَّدِیدُ وَ بَذْلُکَ مُهْجَتَکَ فِی مُحَارَبَةِ أَهْلِ الْکُفْرِ بِمَالِکَ وَ نَفْسِکَ وَ الصَّبْرُ عَلَى مَا یُصِیبُکَ مِنْهُمْ مِنَ الْأَذَى وَ مِنْ أَهْلِ النِّفَاقِ وَ الْأَلَمِ فِی الْحَرْبِ وَ الْجِرَاحِ قَالَ‏ قَبِلْتُ یَا رَبِّ وَ رَضِیتُ وَ سَلَّمْتُ وَ مِنْکَ التَّوْفِیقُ وَ الصَّبْرُ وَ أَمَّا الثَّالِثَةُ فَمَا یَلْقَى أَهْلُ بَیْتِکَ مِنْ بَعْدِکَ مِنَ الْقَتْلِ أَمَّا أَخُوکَ عَلِیٌّ فَیَلْقَى مِنْ أُمَّتِکَ الشَّتْمَ وَ التَّعْنِیفَ وَ التَّوْبِیخَ وَ الْحِرْمَانَ وَ الْجَحْدَ [وَ الْجُهْدَ] وَ الظُّلْمَ وَ آخِرُ ذَلِکَ الْقَتْلُ فَقَالَ یَا رَبِّ قَبِلْتُ وَ رَضِیتُ وَ مِنْکَ التَّوْفِیقُ وَ الصَّبْرُ وَ أَمَّا ابْنَتُکَ فَتُظْلَمُ وَ تُحْرَمُ وَ یُؤْخَذُ حَقُّهَا غَصْباً الَّذِی تَجْعَلُهُ لَهَا وَ تُضْرَبُ وَ هِیَ حَامِلٌ وَ یُدْخَلُ عَلَیْهَا وَ عَلَى حَرِیمِهَا وَ مَنْزِلِهَا بِغَیْرِ إِذْنٍ ثُمَّ یَمَسُّهَا هَوَانٌ وَ ذُلٌّ ثُمَّ لَا تَجِدُ مَانِعاً وَ تَطْرَحُ مَا فِی بَطْنِهَامِنَ الضَّرْبِ وَ تَمُوتُ مِنْ ذَلِکَ الضَّرْبِ قُلْتُ إِنَّا لِلَّهِ وَ إِنَّا إِلَیْهِ رَاجِعُونَ- قَبِلْتُ یَا رَبِّ وَ سَلَّمْتُ وَ مِنْکَ التَّوْفِیقُ وَ الصَّبْرُ [لِلصَّبْرِ] وَ یَکُونُ لَهَا مِنْ أَخِیکَ ابْنَانِ یُقْتَلُ أَحَدُهُمَا غَدْراً وَ یُسْلَبُ وَ یُطْعَنُ تَفْعَلُ بِهِ ذَلِکَ أُمَّتُکَ قُلْتُ یَا رَبِّ قَبِلْتُ وَ سَلَّمْتُ- إِنَّا لِلَّهِ وَ إِنَّا إِلَیْهِ راجِعُونَ‏ وَ مِنْکَ التَّوْفِیقُ لِلصَّبْرِ وَ أَمَّا ابْنُهَا الْآخَرُ فَتَدْعُوهُ أُمَّتُکَ لِلْجِهَادِ ثُمَّ یَقْتُلُونَهُ صَبْراً وَ یَقْتُلُونَ وُلْدَهُ وَ مَنْ مَعَهُ مِنْ أَهْلِ بَیْتِهِ ثُمَّ یَسْلُبُونَ حَرَمَهُ فَیَسْتَعِینُ بِی وَ قَدْ مَضَى الْقَضَاءُ مِنِّی فِیهِ بِالشَّهَادَةِ لَهُ وَ لِمَنْ مَعَهُ وَ یَکُونُ قَتْلُهُ حُجَّةً عَلَى مَنْ بَیْنَ قُطْرَیْهَا فَیَبْکِیهِ أَهْلُ السَّمَاوَاتِ وَ أَهْلُ الْأَرَضِینَ جَزَعاً عَلَیْهِ

ابن قولویه، جعفر بن محمد، کامل الزیارات، ص332، نجف اشرف، چاپ: اول، 1356ش.

محمد بن عبداللہ بن جعفر حمیری نے اپنے والد سے، وہ علی بن محمد بن سلیمان سے، وہ محمد بن خالد سے، انہوں نے عبداللہ بن حماد بصری سے، وہ عبداللہ بن عبدالرحمٰن اصم سے، وہ حماد بن عثمان سے، انہوں نے حضرت ابی عبداللہ سے۔ انہوں نے کہا:  جب حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو آسمان پر لے جایا گیا تو آپ سے کہا گیا:  اللہ تعالیٰ تین چیزوں کے ذریعے آپ کا امتحان لینا چاہتا ہے تاکہ آپ کا صبر دیکھیں۔ حضرت نے عرض کیا: پروردگار میں تیرے حکم کے تابع ہوں، میں تیری مدد کے سوا صبر کرنے کی طاقت نہیں رکھتا، وہ تین چیزیں کیا ہیں؟  تقدس مآب سے کہا گیا: ان میں سے سب سے پہلے اپنے آپ پر اور آپ کے گھر والوں پر بھوک اور مشقت ہے۔ حضرت نے فرمایا: اے رب میں نے اسے قبول کر لیا اور راضی ہو گیا اور سر تسلیم خم کر دیا اور میں تجھ سے کامیابی اور صبر کا سوال کرتا ہوں۔

اور دوسری : وہ جس کی تکذیب کی گئی ہے اور تم پر بڑا خوف طاری ہوگیا ہے، اور اس نے اپنے مال و جان کو اہل کفر سے جنگ میں خرچ کیا ہے، اور ان کی طرف سے تمہیں پہنچنے والی تکلیف کو برداشت کیا ہے۔  حضرت نے فرمایا: اے رب میں نے اسے قبول کر لیا اور راضی ہو گیا اور سر تسلیم خم کر دیا اور میں تجھ سے کامیابی اور صبر کا سوال کرتا ہوں۔

اور تیسرا: یہ اس بات پر مشتمل ہے کہ آپ کے بعد آپ کے گھر والوں کا کیا ہوگا، اور وہ ہے ان کا قتل اور قتل۔  جہاں تک آپ کے بھائی علی کا تعلق ہے: آپ کی امت کی طرف سے توہین، بدتمیزی، طعن و تشنیع، حق کا انکار، تکذیب اور ظلم اس پر ہو گا اور آخر کار اسے قتل کر دیں گے۔  کہا: اے رب، میں نے اسے قبول کر لیا اور راضی ہو گیا اور ہتھیار ڈال دیئے، اور میں تجھ سے کامیابی اور صبر کا سوال کرتا ہوں۔

  اور جہاں تک آپ کی بیٹی کا تعلق ہے: اس پر ظلم ہوگا، اس کے حقوق غصب کیا جاےگا،اور حاملہ ہونے کی حالت میں اسے مارا جاےگا، اور لوگ ان کی اجازت کے بغیر  گھر میں داخل ہوں گے، اور کم ظرف لوگ اسے تکلیف دیں گے، اور اذیت و  ازار کی وجہ سے اسقاط حمل ہو گا اور وہ اسی تکلیف کی وجہ  سے جام شہادت نوش کرے گی۔ حضرت نے فرمایا: میں اسے قبول کرتا ہوں اور میں مطمئن اور اس کے سامنے سر تسلیم خم کرتا ہوں اور میں آپ سے کامیابی اور صبر کا سوال کرتا ہوں، پھر آپ سے فرمایا گیا:    آپ کی بیٹی کے دو بیٹے ہوں گے، ان میں سے ایک کو آپ کی امت چال بازی سے قتل کر یگا، وہ  لوگ اس کے کپڑے چھین لیں گے اور اسے طعنوں کا نشانہ بنائیں گے۔  حضرت نے فرمایا: اے رب میں نے اسے قبول کیا اور اس کے آگے سر تسلیم خم کر دیا و إِنَّا لِلَّهِ وَ إِنَّا إِلَیْهِ راجِعُونَ اور میں تجھ سے صبر میں کامیابی کا سوال کرتا ہوں۔  اور جہاں تک اس کے دوسرے بیٹے کا تعلق ہے، امت نے اسے جہاد کی دعوت دیگا، پھر وہ  لوگ اسے برے اور غیر معمولی طریقے سے قتل کریگا، اس کے بچوں اور اس کے اہل خانہ کو جو اس کے ساتھ ہیں، قتل کریگا، اور پھر اس کے حرم پر قبضہ کریگا۔  پس وہ مجھ سے مدد اور نصرت چاہتا ہے، لیکن میری طرف سے یہ فرمان جاری ہوا کہ وہ اور اس کے ساتھ والے سب شہید ہو جائیں، اس کا قتل زمین کے دونوں کناروں کے درمیان رہنے والوں کے خلاف دلیل ہوگا۔  آسمان والے اور اہل زمین اس کے لیے رویں گے اور جو فرشتے اس کی مدد نہیں کر سکتے  وہ اس معاملے میں رویں گے۔

 ابن قولویه، جعفر بن محمد، کامل الزیارات، ص999، ترجمه ذهنى تهرانى - تهران، چاپ: اول، 1377 ش.

اوپر کی روایت سے صدیقہ طاہرہ سلام اللہ علیہا کی شہادت کا مفہوم حملہ آوروں کے زخموں اور ضربوں کی شدت سے واضح ہے۔ یہ روایت تمام اصحاب امامیہ کی مشہور اور معتبر روایتوں میں سے ہے اور اسے جاری کرنے میں کوئی حرج نہیں ہے۔

4/3/7. من لا یحضره الفقیه شیخ صدوق:

شیخ صدوق شیعہ حدیث کے ستونوں میں سے ایک ہیں۔ آپ کی پرورش مکتب قم میں ہوئی۔ شیخ صدوق نے اپنی مشہور کتاب من لا یحضرہ الفقیہ کے شروع میں کہا ہے کہ وہ اس کتاب میں ایسی روایات شامل کرتے ہیں جو حجت ہے اور ان پر عمل کیا جا سکتا ہے۔اس روایت کی کتاب میں سب سے اہم احادیث جو صدیقہ طاہرہ سلام اللہ علیہا کے حوادث سے متعلق ہیں۔  مندرجہ ذیل روایت ہے جو صراحت کرتی ہے کہ فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا  صدیقہ اور شہیدہ تھیں:

« السَّلَامُ عَلَیْکِ أَیَّتُهَا الصِّدِّیقَةُ الشَّهِیدَةُ السَّلَامُ عَلَیْکِ أَیَّتُهَا الرَّضِیَّةُ الْمَرْضِیَّة»

 ابن بابویه، محمد بن على، من لا یحضره الفقیه، ج‏2 ؛ ص573، قم، چاپ: دوم، 1413 ق.

4/3/8. تهذیب الاحکام شیخ طوسی

شیعوں کی چار سب سے اہم روایتی کتابوں میں سے ایک تہذیب الاحکام ہے۔ اس کتاب کے تعارف میں شیخ طوسی نے اپنی کتاب کے پیروکاروں اور قارئین سے وعدہ کیا ہے کہ وہ اس میں ایسی روایات کو شامل کریں گے جو اصحاب امامیہ کے درمیان مشہور و معروف اور معتبر ہوں۔ اس کتاب کی احادیث میں سے ایک حدیث ہے جو واضح طور پر حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت کے بارے میں بتاتی ہے:

 «السَّلَامُ عَلَیْکِ یَا أُمَّ الْحَسَنِ وَ الْحُسَیْنِ سَیِّدَیْ شَبَابِ أَهْلِ الْجَنَّةِ السَّلَامُ عَلَیْکِ أَیَّتُهَا الصِّدِّیقَةُ الشَّهِیدَةُ السَّلَامُ عَلَیْکِ أَیَّتُهَا الرَّضِیَّةُ الْمَرْضِیَّة»

طوسى، محمد بن الحسن، تهذیب الأحکام (تحقیق خرسان)، ج‏6 ؛ ص10، تهران، چاپ: چهارم، 1407 ق.

4/3/9. احتجاج مرحوم طبرسی

شیعہ کی ایک مستند روایتی کتاب جو ہمیشہ امامیہ علماء اور فقہاء کی توجہ کا مرکز رہی ہے، مرحوم طبرسی کی کتاب الاحتجاج ہے۔  اس عظیم کتاب کے مصنف نے اپنی کتاب کے شروع میں یہ شرط رکھی ہے کہ وہ اس کتاب میں ایسی روایات کو شامل کریں گے جو اجراء کے نقطہ نظر سے دلائل کے مشابہ ہوں جیسے عقل قطعی سے اتفاق یا قرآنی موضوعات سے اتفاق۔ اور شیعہ عقیدہ کے اصول قطعی اور...محرزاور مسلم ہوں:

 و لا نأتی فی أکثر ما نورده من الأخبار بإسناده إما لوجود الإجماع علیه أو موافقته لما دلت العقول إلیه أو لاشتهاره فی السیر و الکتب بین المخالف و المؤالف‏

میں نے بہت سی خبروں کی سند جیسے اس پر اجماع کا وجود، حدیث کے مواد کے اتفاق یا سیرت کی کتابوں میں روایت کی مقبولیت اور شیعہ و سنی کے درمیان متفق و اختلاف کرنے والی کتابوں کا ذکر نہیں کیا۔

طبرسى، احمد بن على، الإحتجاج على أهل اللجاج (للطبرسی)، ج‏1 ؛ ص14، مشهد، چاپ: اول، 1403 ق.

مرحوم طبرسی نے اپنی روایت کی کتاب کے ایک حصے میں ایک روایت ذکر کی ہے جو صدیقہ طاہرہ کی شہادت کو واضح کرتا ہے:

« ِ ثُمَّ قَالَ لِقُنْفُذٍ إِنْ خَرَجَ وَ إِلَّا فَاقْتَحِمْ عَلَیْهِ فَإِنِ امْتَنَعَ فَأَضْرِمْ عَلَیْهِمْ بَیْتَهُمْ نَاراً فَانْطَلَقَ قُنْفُذٌ فَاقْتَحَمَ هُوَ وَ أَصْحَابُهُ بِغَیْرِ إِذْنٍ وَ بَادَرَ عَلِیٌّ إِلَى سَیْفِهِ لِیَأْخُذَهُ فَسَبَقُوهُ إِلَیْهِ فَتَنَاوَلَ بَعْضَ سُیُوفِهِمْ فَکَثُرُوا عَلَیْهِ فَضَبَطُوهُ وَ أَلْقَوْا فِی عُنُقِهِ حَبْلًا أَسْوَدَ وَ حَالَتْ فَاطِمَةُ ع بَیْنَ زَوْجِهَا وَ بَیْنَهُمْ عِنْدَ بَابِ الْبَیْتِ فَضَرَبَهَا قُنْفُذٌ بِالسَّوْطِ عَلَى عَضُدِهَا فَبَقِیَ أَثَرُهُ فِی عَضُدِهَا مِنْ ذَلِکَ مِثْلُ الدُّمْلُوجِ‏ مِنْ ضَرْبِ قُنْفُذٍ إِیَّاهَا فَأَرْسَلَ أَبُو بَکْرٍ إِلَى قُنْفُذٍ اضْرِبْهَا فَأَلْجَأَهَا إِلَى عِضَادَةِ بَیْتِهَا فَدَفَعَهَا فَکَسَرَ ضِلْعاً مِنْ جَنْبِهَا وَ أَلْقَتْ جَنِیناً مِنْ بَطْنِهَا فَلَمْ تَزَلْ صَاحِبَةَ فِرَاشٍ حَتَّى مَاتَتْ مِنْ ذَلِکَ شَهِیدَةً

پھر قنفذ کو حکم دیا کہ اگر وہ نہ جائے تو اس کی اجازت کے بغیر داخل ہو جاو  اور اگر وہ ممانعت کرے تو گھر کو آگ لگا دو۔ قنفذ اپنے ساتھیوں کے ساتھ بغیر اجازت ولی خدا کے گھر پر حملہ کر دیا،   اور اپ نے دفاع کے لیے تلوار نکالی لیکن بھیڑ نے اسے گھیر لیا اور تلوار چھین لیا۔  اور چاروں طرف سے گھیر کر ان کی مبارک گردن میں سیاہ رسی ڈال دیا۔  یہ تکلیف دہ صورت حال دیکھ کربنت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم بے صبر ہو گئے اور اپنے شوہر کو چھوڑانے کی کوشش کی لیکن قنفذ ملعون نے صدیقہ طاہرہ کے مبارک بازو پر اپنا کوڑا  مارا!! اس ضرب کا اثر اس کے بازو میں مرتے دم تک باقی رہا۔ اسی دوران ابو بکر نے قنفذ کو پیغام بھیجا کہ علی کو میرے پاس لے آؤ اور اگر فاطمہ انکار کرے تو اسے مارو اور علی سے دور رکھو۔  اس پیغام کے ساتھ ہی یہ ماجرا شدت اختیار کی  اور  آخر میں دروازے اور دیوار کے دباؤ اور اس کی شدت کے درمیان نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی پیاری بیٹی پر ظلم و بربریت اور شدت کو دیکھا گیا۔ یہ حملہ اتنا شدید تھا کہ خاتون کی پسلی ٹوٹ گئی اور اسقاط حمل ہو گیا!!  اس گھناؤنے فعل کے نتیجے میں وہ محترمہ اپنی زندگی کے آخری دن تک مسلسل زمین گیر رہیں یہاں تک کہ وہ مظلومہ شہید ہو گئیں، خدا کی رحمتیں اس پر نازل ہوں۔

طبرسى، احمد بن على، الإحتجاج على أهل اللجاج (للطبرسی)، ؛ ج‏1 ؛ ص83، مشهد، چاپ: اول، 1403 ق.

4/3/10۔ نتیجہ

مندرجہ بالا واقعات پر غور کرنے سے یہ بات واضح ہو جاتی ہے کہ صدیقہ طاہرہ سلام اللہ علیہا کی شہادت شیعوں کے اہم ترین اصولوں اور روایتوں کی کتابوں میں ایک یقینی موضوع رہی ہے۔  یہاں یہ بتانا ضروری ہے کہ صحیح کتابوں اور اصول حدیث میں ان روایات کے وجود کی وجہ سے روایات کو معتبر بنانے کی بنیاد شیخ مفید کے نزدیک ان کی رائے میں صدیقہ طاہرہ سلام اللہ علیہا کی شہادت یقینی تھی۔

4/4۔ شیعہ علماء کے اجماع سے متفق ہونا۔

 امامیہ علماء کے اجماع کے ساتھ کسی روایت کے مواد کا متفق ہونا ائمہ علیہم السلام سے روایت جاری کرنے کے لیے اہم ترین دلیل اور علم کا ذریعہ ہے۔ شیخ طوسی (460ھ): حضرت زہرا کے پیٹ پر عمر کے مارنے اور ان کے اسقاط حمل اور اس خاتون کی شہادت پر اجماع ہے اور اختلاف نہیں کیا گیا ہے:

«و المشهور الذی لا خلاف فیه بین الشیعة: أن عمر ضرب علی بطنها حتی اسقطت فسمی السقط محسنا.... لا یختلفون فی ذلک

شیعہ روایت کو بھی اسی تناظر میں قبول کیا جاتا ہے اور کسی شیعہ نے اس میں اختلاف نہیں کیا  .... کہ عمر نے صدیقہ طاہرہ سلام اللہ علیہا کے پہلو میں  مارا اور اس کے نتیجے میں محسن کا اسقاط حمل ہو گیا۔۔۔ اس معاملے میں شیعہ علماء کے درمیان کوئی اختلاف نہیں ہے۔

 الطوسی، أبو جعفر محمد بن الحسن (المتوفی 460 ق)، تلخیص الشافی‏، ج3 ص156، لملاحظات: مقدمه و تحقیق از حسین بحر العلوم، دار النشر: انتشارات المحبین - قم، الطبعة: اول‏، سنة الطبع: 1382ش.

شیخ مفید - جنہوں نے اجماع کی روایت کو دلیل مانتے تھے، کی بنیاد کو مدنظر رکھتے ہوئے کہا جاسکتا ہے کہ شہادت صدیقہ طاہرہ کی مثبت روایتیں اور اس خاتون کے مصائب ان کی نظر میں یقینی اور ناقابل اعتراض ہیں۔ البتہ اس بات کو بھی مدنظر رکھنا چاہیے کہ متقدمین میں سےصحابہ کرام اور فقہاء امامیہ کا اجماع فقہاء و محدثین کی   حضور معصومین  کےزمانہ سے قریب ہونےکی وجہ سے معلوم ہوتی ہیں۔ دریافت کا یہ اتفاق اس بات کا بہت مضبوط اور معروف ثبوت ہے کہ صدیقہ طاہرہ سلام اللہ علیہا نے شہادت پائی۔  اور اس فرض کے بنیاد پر کہ ہمارے زمانے کے روایتی منابع میں کوئی روایت موجود نہیں تھی، یہ اجماع حجت تھا کیونکہ یہ نہیں کہا جا سکتا کہ شیعہ علماء نے اتنے اہم اور حساس مسئلہ پر بغیر ثبوت کے رائے دی ہو، اس لیے ان کے پاس یقینی ثبوت موجود تھا۔  اس لیے بعض لوگوں نے کہا ہے کہ حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کے ساتھ پیش آنے والے واقعات کی صحیح روایت لے کر آئیں، ہم اس قیاس پر کہہ رہے ہیں کہ ایسی کوئی روایت ہرگز نہیں ہے، لیکن  شیعوں کے نقطہ نظر سے یہ شہرت اور اجماع صحیح ہے۔

5. مغالطه اشتراک لفظی شیخ مفید کے نقطہ نظر سے

اب تک محترم قاری شیخ مفید کے اجتہاد کے قطعی اصولوں کی بنیاد پر ان کے خیالات سے واقف ہو چکے ہیں۔ اور وہ بے شمار قطعی دلائل و شواہد کی بنا پر اس نتیجے پر پہنچے کہ شیخ مفید صدیقہ طاہرہ کی شہادت میں فیصلہ کن تھے۔  اس میں بعض منحرف گروہ جن کی حمایت وہابیت بھی کرتی ہے،  شیخ مفید کی کتاب ارشاد کا ایک جملہ نقل کر کے یہ حقیقت پیش کرنے کی کوشش کر رہے ہیں کہ شیعوں کے درمیان حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت کا تصور یقینی نہیں ہے اور شیعوں کے درمیان اختلافات پائے جاتے ہیں۔

شبہات ایجاد کرنے والوں کےلئے  سندشیخ مفید کا ارشاد میں درج ذیل ہے:

 «و فی الشیعة من یذکر أن فاطمة سلام الله علیها أسقطت‏ بعد النبی‏ صلی الله علیه و آله ولدا ذکرا کان سماه رسول الله صلی الله علیه و آله و هو حمل محسنا فعلى قول هذه الطائفة أولاد أمیر المؤمنین علیه السلام ثمانیة و عشرون و الله أعلم‏»

یمن میں کچھ شیعہ ایسے ہیں جو کہتے ہیں کہ بے شک فاطمہ( سلام اللہ علیہا) کا رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وسلم) کے بعد ایک بیٹا سقط حمل ہواتھا جس کا نام رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے محسن رکھا تھاجب صدیقہ طاہرہ سلام اللہ علیہا حاملہ تھیں۔ اس فرقہ شیعہ کے مطابق امیر المومنین کے اٹھائیس بچے ہوتےہیں بحرحال   خدا سب کچھ جانتا ہے۔

 مفید، محمد بن محمد، الإرشاد فی معرفة حجج الله على العباد، ج‏1 ؛ ص355، قم، چاپ: اول، 1413 ق.

یہ بات بالکل واضح ہے کہ مذکورہ بالا بیان صدیقہ طاہرہ کی شہادت میں شیخ مفید کے اجتہاد فکر سے کوئی متصادم نہیں ہے۔  کیونکہ ان کی شہادت اور اولاد کا مسئلہ دو بالکل الگ الگ معاملات ہیں۔ البتہ شیعہ اور سنی روایات اور احادیث کی کتابوں میں ایسی روایات موجود ہیں کہ شہادت کا سبب وہ ضرب تھی جو قنفد نے صدیقہ طاہرہ کے پہلو پر لگائی تھی، جس کے نتیجے میں محسن کا اسقاط حمل ہوا۔ اور حضرت شدید بیمار رہیں اور آخر کار جام شہادت نوش کی ۔ لیکن یہ جاننا چاہیے کہ شہادت کا مضمون کے یقینی ہونے کے باوجود اس کی بعض تفصیلات کا اختلافی ہونا اس کے واقع ہونے کے اصول کو نقصان نہیں پہنچاتا۔

  تاہم یہ معلوم ہونا چاہیے کہ شیخ مفید کا"فی الشیعہ"اس عبارت سے   مراد امامیہ شیعہ نہیں ہیں، کیونکہ شیخ مفید کے وقت شیعہ امامیہ نہیں تھے۔ علامہ سید جعفر مرتضیٰ عاملی اس بارے میں لکھتے ہیں:

 «العبارة المذکورة لا تدل على مخالفة المفید للطوسی فی هذا الامر؛ لأن کلمة «الشیعة» کانت فی زمن الشیخ المفید تطلق على العدید من الفرق، مثل: الزیدیة، و الاسماعیلیة، و الامامیة، و غیرهم، بل و على المعتزلة أیضا الذین کانوا هم الحاکمین فی بغداد، و هم الذین سمحوا بإقامة مناسبة عاشوراء بالطریقة المعروفة و المتداولة حتى یومنا هذا.و کان یطلق على الشیعة الامامیة من قبل خصومهم اسم: الرافضة»

شیخ مفید کے بیان سے یہ ظاہر نہیں ہوتا ہے کہ شیخ مفید حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت کے بارے میں شیخ طوسی کے اس اتفاق سے متفق نہیں ہیں۔ کیونکہ شیخ مفید کے زمانے میں لفظ شیعہ کا اطلاق کئی فرقوں پر ہوتا تھا جیسے:    زیدیہ، اسماعیلیہ، امامیہ وغیرہ۔  یہاں تک کہ یہ لفظ معتزلہ پر بھی لاگو ہوا ہے جو اس وقت بغداد پر حکومت کرتا تھا۔  اور اسی گروہ نے عاشورا کی تقریب کو معمول کے مطابق منعقد کرنے کی اجازت دی جو اب تک جاری ہے۔  شیعوں کے نام کو ان کے دشمنوں نے رافضی سے تعبیر کیا!

عاملى، جعفر مرتضى، مأساة الزهراء علیها السلام، ج‏1 ؛ ص167، 2جلد، دار السیرة - بیروت، چاپ: دوم، 1418 ه.ق.

اس جواب کی تصدیق شیخ مفید کے الارشاد میں درج ذیل قول سے بھی ہوتی ہے: «الشِّیعَةَ رَجُلَانِ: إِمَامِیُ‏ وَ زَیْدِیٌّ»

شیعہ کی دو قسمیں ہیں، امامی اور زیدی!

الإرشاد فی معرفة حجج الله على العباد؛ نویسنده مفید محمد بن محمد (وفات: 413)، محقق/ مصحح: مؤسسة آل البیت علیهم السلام‏، ناشر: دار المفید للطباعة والنشر والتوزیع - بیروت – لبنان، ج2، ص22

اس کے علاوہ امامیہ کے مخالفین کے اعترافات کا تجزیہ کرنے سے یہ بات واضح ہوجاتی ہے کہ بارہ امامی شیعہ میں سے جو شیخ مفید کے ماننے والے تھے، صدیقہ طاہرہ سلام اللہ علیہا کی شہادت پر یقین رکھتے تھے۔  اور یہاں تک کہ انہوں نے اس کے لئے وسیع تقاریب اور ماتم کا انعقاد کیا۔

"قاضی عبدالجبار معتزلی" اپنی کتاب " تثبیت دلائل النبوة " میں ہم عصر شیخ مفید کہتے ہیں:

 « وفی هذا الزمان وابو عبدالله محمد بن نعمان وکل هؤلاء یبکون علی فاطمة وعلی ابنها المحسن ویقیمون المنشدین والمناحات فی ذلک»

اس وقت شیخ مفید ابو عبد اللہ محمد بن نعمان اور یہ تمام شیعہ فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا اور ان کے بیٹے محسن کے لیے گریہ و زاری کرتے ہیں اور ان کے لیے ماتم اور نوحہ خوانی و مجلسیں منعقد کرتے ہیں۔

تثبیت دلائل النبوة؛ القاضى عبد الجبار بن أحمد بن عبد الجبار الهمذانی الأسد أبادی، أبو الحسین (متوفای 415هـ)، حققه وقدم له: الدکتور عبد الکریم عثمان، دار النشر: دار العربیة للطباعة والنشر والتوزیع، بیروت – لبنان، ج1، ص594-595

نتیجہ یہ ہے کہ شبہ پیدا کرنے والے نے بعض زیدیوں کی رائے کو غلط فہمی اور لفظ شیعہ میں الفاظ کے اشتراک کی غلط فہمی کے ساتھ شیعہ کی طرف منسوب کیا ہے۔ اور اس کے ذریعے سامعین کو یہ دکھانے کی کوشش کی کہ شیخ مفید صدیقہ طاہرہ کی شہادت پر یقین نہیں رکھتے تھے ۔

6-نتیجہ

شیخ مفید کے اجتہاد کی بنیادوں کے بارے میں تفصیلی تجزیے کے ساتھ تاریخی روایات اور گذارشوں کو صحیح قرار دینے اور اسے ان کے فقہی، احادیث اور تاریخی کاموں پر لاگو کرنے کے حوالے سے وضاحت کی گئی کہ امامیہ کے اس عظیم عالم کی رائے میں صدیقہ طاہرہ کی شہادت متعدد طریقوں، اسباب اور دلائل کی بنا پر یقینی ہے۔  وہ لوگ جو شیخ مفید پر حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت کو نہ ماننے کا الزام لگاتے ہیں۔ انہیں اجتہاد کی بنیادوں اور اس کے کاموں کی کوئی سمجھ اور علم نہیں ہے یہ لوگ اور منحرف فرقے وہابی سیاست اور عالمی صیہونیت کے مطابق شیعہ مسلمانوں کے عقائد پر شک کرنے کی کوشش کر رہے ہیں تاکہ ان کے شیطانی افکار کے اثر کو بنیاد فراہم کریں۔

 

 

 

 





Share
* نام:
* ایمیل:
* رائے کا متن :
* سیکورٹی کوڈ:
  

آخری مندرجات
زیادہ زیر بحث والی
زیادہ مشاہدات والی