2022 May 19
سعودی عرب کے قلب پر زہریلے حملے؛ یمن پر سعودی متحدہ عرب امارات کے حملے کے آٹھویں سال کے آغاز پر مظلوم یمنی عوام کا شجاعانہ حملہ ۔۔۔۔۔۔
مندرجات: ٢٢٤٨ تاریخ اشاعت: ٢٦ March ٢٠٢٢ - ١٧:٣٢ مشاہدات: 247
خبریں » پبلک
سعودی عرب کے قلب پر زہریلے حملے؛ یمن پر سعودی متحدہ عرب امارات کے حملے کے آٹھویں سال کے آغاز پر مظلوم یمنی عوام کا شجاعانہ حملہ ۔۔۔۔۔۔

یمن کی فوج اور عوامی رضاکار فورسز نے جمعہ کی رات  سعودی اتحاد کے حملوں کے جواب میں بڑے پیمانے پر جدہ میں تیل کمپنی آرامکو کی تنصیبات کو نشانہ بنایا جس کے بعد اس میں آگ بھڑک اٹھی۔
سات سال قبل آج کے دن سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کی حکومتوں نے امریکہ، برطانیہ اور اسرائیل کے اکسانے، حمایت اور ہم آہنگی سے یمنی عوام کے خلاف تباہ کن جنگ شروع کی تھی اور انسانی اور اسلامی اقدار کے احترام اور پاسداری کے بغیر یمنی شہروں کو نشانہ بنایا تھا۔
 
یمن پر سعودی متحدہ عرب امارات کے حملے کے آٹھویں سال کے آغاز میں حالیہ یمنی کارروائی نے سعودیوں کو بہت زیادہ تکلیف اور خوفزدہ کیا ہے۔ سعودی وزارت توانائی کے ایک اہلکار نے کہا کہ سعودی تیل کی تنصیبات پر یمن کے جاری حملوں کے بعد عالمی منڈی میں تیل کی سپلائی میں کمی کی ذمہ داری ملک پر عائد نہیں ہوتی۔

اس ذریعے نے مینوفیکچرنگ، پروسیسنگ اور ریفائننگ کے شعبوں پر یمنی حملوں کے "سنگین اور خطرناک اثرات" کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اس سے سعودی عرب کی پیداواری صلاحیت اور عالمی منڈیوں میں اپنی ذمہ داریوں کو پورا کرنے کی صلاحیت متاثر ہوگی اور اس میں کوئی شک نہیں کہ اس سے سلامتی کو خطرہ ہے۔ اور عالمی منڈیوں میں توانائی کی فراہمی کا استحکام۔

سعودی اہلکار کا یہ بیان سرکاری طور پر اس بات کا اعتراف ہے کہ یمنی میزائل اور ڈرون سعودی عرب اور اس کے اہم تیل اور تنصیبات کے قلب میں مارے گئے، رہائشی علاقوں میں نہیں۔ یہ ریمارکس یمنی دلدل سے بچانے کے لیے سعودیوں کی مدد کی فریاد بھی ہیں، جب کہ وہ اچھی طرح جانتے ہیں کہ سعودی عرب کی گہرائی تک یمنی حملوں کو اسی صورت میں روکا جا سکتا ہے جب یمن پر جارحیت روک دی جائے اور محاصرہ ختم کر دیا جائے۔

قابل ذکر ہے کہ سعودی عرب پر یمنی جارحیت کے بارے میں امریکی محکمہ خارجہ کا بیان ایک بہت اہم نکتہ پر مشتمل ہے، جو کہ "امریکی حکومت یمن میں جنگ کے خاتمے کے لیے اقوام متحدہ کی قرارداد کے مسودے پر کام کر رہی ہے"۔ یہ سعودی حکومت کو 7 سال پہلے سے لٹکائے ہوئے درخت سے نیچے لانے کی سیڑھی ہے۔

یہ واضح ہے کہ جارح ممالک - بغیر کسی استثناء کے - یہ جان چکے ہیں کہ انصاراللہ تحریک نہ تو ایک ملیشیا ہے اور نہ ہی پیسے اور طاقت کے لیے لڑنے والی کسی خاص جماعت کا پراکسی گروپ ہے اور نہ ہی کوئی فرقہ وارانہ تحریک ہے۔ اگر ایسا ہوتا تو یہ عصمت دری کے پہلے ہفتوں یا مہینوں میں ناکام ہو جاتا۔

انصار اللہ ایک حقیقی قومی، آزادی پسند، انقلابی، اسلامی اور یمنی تحریک ہے جس کی جڑیں یمن کے قدرتی اور آبادیاتی جغرافیہ کی گہرائیوں میں پیوست ہیں، جو نہ صرف امریکیوں، اسرائیلیوں، برطانویوں، سعودیوں اور اماراتی عوام کے جارحانہ اتحاد کا مقابلہ کرنے میں کامیاب رہی ہے، بلکہ اس نے کامیابی حاصل کی ہے۔

دفاعی پوزیشن سے اپنا دفاع کرنے کے قابل بھی ہے، حملے کی پوزیشن کو منتقل کیا جانا چاہیے اور اس سے ان جارحوں کو بہت زیادہ نقصان پہنچانا چاہیے جو یوکرین کی جنگ کے سائے میں تیل کے بحران سے دوچار ہوئے اور اس لیے سعودی عرب کو بچانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ عرب جس سب سے بڑی دلدل میں پھنس گیا ہے۔




Share
* نام:
* ایمیل:
* رائے کا متن :
* سیکورٹی کوڈ:
  

آخری مندرجات
زیادہ زیر بحث والی
زیادہ مشاہدات والی